پٹرول پر بھاری ٹیکس کے خلاف کانگریس کا ملک گیر احتجاج

کانگریس نے آج کہا کہ وہ پٹرول اور ڈیزل پر سنٹرل اکسائز ڈیوٹی میں بھاری اضافہ کے خلاف ملک گیر احتجاج کرے گی۔ بی جے پی حکومت پر عام آدمی کو لوٹنے اور نفع کمانے کا الزام عائد کرتے ہوئے کانگریس کے سینئر ترجمان اجئے ماکن نے کہا کہ پارٹی ‘ ٹیکس کے اس خطرناک نظام سے دستبرداری تک احتجاج جاری رکھے گی۔ انہوںنے کہا کہ 100 روپے کے پٹرول میں 51 روپے 78 پیسے کے ٹیکسس ہوتے ہیں جبکہ 100 روپے کے ڈیزل میں 44 روپے 40 پیسے کے ٹیکسس ہوتے ہیں۔ انہوںنے ایندھن پر عائد ٹیکسس اور حکومت کی آمدنی پر وائٹ پیپر جاری کرنے کا مطالبہ کیا۔ احتجاج 20 ستمبر کو قومی دارالحکومت سے شروع ہوگا۔ اجئے ماکن نے کہا کہ کانگریس عام آدمی پر اس بوجھ کے خلاف ملک گیر احتجاج کرے گی۔ کانگریس 17 ستمبر سے پٹرول پمپس پر دستخطی مہم شروع کرے گی اور بڑا احتجاج 20 ستمبر کو ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ان کی پارٹی ہر دستیاب فورم میں جدوجہد کرے گی۔ انہوں نے بی جے پی کو چیلنج کیا کہ وہ ایندھن پر ٹیکسس اور اس سے حاصل ہونے والی آمدنی پر وائٹ پیپر جاری کرے۔ اجئے ماکن نے اخباری نمائندوں سے کہا کہ ہم عوام کے لئے پوری قوت سے لڑیں گے۔ دہلی کانگریس کے صدر نے کہا کہ عام آدمی کی جیب پر ڈاکہ ڈالنا بی جے پی کی حکمرانی کا خصوصی امتیاز ہے۔ بی جے پی حکومت کا واحد مقصدعوام کو لوٹنا ہے۔ خام تیل کی قیمتیں گھٹ رہی ہیں جبکہ پٹرول اور ڈیزل کی قیمتیں آسمان سے باتیں کررہی ہیں۔

جواب چھوڑیں