پروفیشنلس، کانگریس میں شامل ہوجائیں: ٹی پی سی سی صدر این اتم کمار ریڈی 

صدر پردیش کانگریس این اتم کمار ریڈی نے آج کہا کہ ان کاسیاست میں داخلہ اتفاقی رہا ہے ۔ بحیثیت انڈین فورس پائلٹ میں نے کبھی ےہ نہیں سوچاتھا کہ وہ سیاست میں داخل ہوں گے ۔ لےکن میں، عملی سیاست میں داخل ہوگیا اور مسلسل4میعاد سے اسمبلی کےلئے منتخب ہوتا آرہا ہوں۔ اب وہ، صدر پردیش کانگریس تلنگانہ کے صدارتی عہدہ پر فائز ہےں۔ این اتم کمار نے ہفتہ کے روز پروفیشنلس سے خواہش کی کہ وہ کانگریس پارٹی میں شامل ہوجائیں گے ۔ آل انڈیا پروفیشنلس کانگریس جنوبی ہند کے رابطہ کارڈاکٹر جئے گیتا ریڈی، قانون ساز کونسل میں اپوزیشن لیڈر محمد علی شبیر کے ساتھ گاندھی بھون میں آج میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے این اتم کمار ریڈی نے پروفیشنلس پر زور دیا کہ وہ ملک کے مفاد میں کانگریس میں شامل ہوجائیں۔ کانگریس میں شامل ہوتے ہوئے پروفیشنلس ملک کی تعمیر میں حصہ لے سکتے ہےں۔ حلقہ اسمبلی کوداڑ سے پہلی بار منتخب ہونے کے بعد انہوںنے ہزاروں دانشوروں کو کامیاب ترغیب دی کہ وہ الےکٹورل عمل کا حصہ بنیں جب کہ ےہ افراد عرصہ دراز سے ووٹنگ کے عمل سے دوری اختیار کئے ہوئے تھے ۔ انہوںنے کہا کہ2014 کے عام انتخابات کے دوران ملک کے پروفیشنلس کی اےک بہت بڑی تعداد‘ بی جے پی کے پروپگنڈے کی شکار ہوگئی تھی۔ وہ ‘ نریندر مودی کے دل خوش کن اعلانات سے متاثر ہوکر بی جے پی کے حق میں اپنا ووٹ کا استعمال کیا تھا لےکن جب انہیں احساس اس وقت ہوا کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے حسین سپنے دکھا کر ان کے ساتھ فریب کیا ہے۔ کانگریس کے نائب صدر راہول گاندھی اس حقیقت کوتسلیم کرتے ہےں کہ ملک کے کئی ملین پروفیشنلس، جمہوریت کے استحکام میں اہم رول ادا کرسکتے ہےں۔ اس کے بعد راہول نے سابق مرکزی وزیر ششی تھرور کی صدارت میں آل انڈیا پروفیشنلس کانگریس‘ تشکےل دینے کا فیصلہ کیا ہے ۔ انہوں نے ڈاکٹر جے گیتا ریڈی کو پروفیشنلس کانگریس کی جنوبی ہند کی کوآرڈینٹر مقرر کرنے کا خیرمقدم کیا ۔ ڈاکٹر گیتا ریڈی اےک سینئر رکن اسمبلی ہےں ۔ سیاست کا انہیں تجربہ ہے ۔ وزیر بھی رہ چکی ہےں سب سے اہم با ےہ ہے کہ وہ‘ تعلیم یافتہ دلت قائد ہےں۔ اتم کمار ریڈی نے کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی اور چیف منسٹر کے چندر شیکھر را¶ 2014 سے جمہوریت کے چوتھے ستون کو تباہ کرنے کی کوشش کررہے ہےں۔ غریب وکمزور طبقات کو خوشحال بنانے کے اقدامات کرنے کے بجائے بی جے پی حکومت بیف پر مباحث کررہی ہے۔ اقلیتوں میں عدم تحفظ کا احساس پیدا کیا جارہا ہے۔ محمد علی شبیر نے اس امید کااظہار کیا کہ پروفیشنلس جو ماضی میں بی جے پی کا ساتھ دے چکے ہےں، آئندہ انتخابات میں کانگریس کی تائید وحمایت میں سامنے آئیں گے ۔

جواب چھوڑیں