عالمی امن وسلامتی کیلئے دہشت گردی اولین خطرہ: سشما سوراج

وزیر خارجہ ہند سشما سوراج نے آج کہا ہے کہ عالمی امن و سلامتی کے لئے دہشت گردی اولین خطرات میں سے ایک ہے کیونکہ اس لعنت کے سبب ’’ہمارے شہری‘‘ معذور اور ہلاک ہوجاتے ہیں اور دہشت گردی کے سبب ترقی کی منزلوں تک پہنچنے کی ہماری صلاحیت کی بیخ کنی ہوتی ہے۔ یہاں ‘ غیرجانبداری تحریک (نام) کے 18 ویں وسط مدتی وزارتی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے سلامی کونسل اقوام متحدہ میں اصلاحات کی ضرورت پر بھی زور دیا اور کہا کہ اقوام متحدہ کی اصلاح کی کوئی کوشش اُس وقت تک مکمل نہیں ہوگی جب تک کہ سلامتی کونسل میں اصلاحات نہ لائی جائیں۔ یہاں یہ تذکرہ مناسب ہوگا کہ ہندوستان بااختیار سلامتی کونسل میں طویل عرصہ سے اصلاحات کی تکمیل کے لئے زور دیتا آرہا ہے۔ سشما سوراج نے کہا کہ بین الاقوامی امن و سلامتی کے لئے دہشت گردی ایک اولین خطرہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ’’بدقسمتی سے دہشت گردی کا خاتمہ کرنے کے بارے میں ہمارے اقوال ‘ ہمارے اقدامات سے میل نہیں کھائے۔ دہشت گردی کی لعنت کا مقابلہ کرنے کے لئے موجودہ بین الاقوامی قوانین اور میکانزمس کے دُہرے معیارات کے بغیر اقدامات ضروری ہیں‘‘۔ مذکورہ وزارتی اجلاس کی صدارت وزیر خارجہ وینزویلا جارج اریزا نے کی۔ وزیر خارجہ ہند نے کہا کہ 1996 میں ہندوستان نے بین الاقوامی دہشت گردی سے نمٹنے ایک جامع کنونشن (سی سی آئی ٹی) کی تجویز پیش کی تھی تاکہ اس طرح موجودہ قانونی ڈھانچہ کو مستحکم کیا جائے۔ اس کے باوجود زائداز 20 برس کا عرصہ گذرچکا مذاکرات میں کوئی پیشرفت نہیں ہوئی اور دہشت گرد عناصر ‘ زیادہ آزادی کے ساتھ اور غیرانسانی طرزعمل اختیار کرتے ہوئے اپنے اقدامات جاری رکھے ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ’’پہلے قدم کے طورپر ہمیں سی سی آئی ٹی کو قطعیت دینے کے اپنے عہد کی تجدید کرنی چاہئے ۔ غیرجانبدار ممالک کو چاہئے کہ وہ حصول ِ مقصد کے لئے بین الاقوامی برادری کو ہم خیال بنائیں۔ سشما سوراج نے کہا کہ جنرل اسمبلی کے گذشتہ اجلاس میں اعلیٰ سطح پر بین الاقوامی برادری نے اس جامع خواہش کا اظہار کیا تھا کہ اقوام متحدہ میں تبدیلیاں اور اصلاحات لائی جائیں۔ وزیر خارجہ ہند نے کہا کہ ’’فلسطینی کاز کے لئے ہندوستان کی حمایت‘ ہماری خارجہ پالیسی کی آئینہ دار ہے۔ حالات کے اِس موڑ پر نام تحریک کے لئے یہ بڑی اچھی بات ہوگی کہ وہ فلسطینی عوام کے ساتھ اپنی یکجہتی کا اظہار کرے۔ روم میں منعقدہ ایک حالیہ میٹنگ میں ہندوستان نے اقوام متحدہ ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی (UNRWA) کے بجٹ کے لئے اپنی امداد میں اضافہ کا فیصلہ کیا کیونکہ یہ ایجنسی مالیاتی بحران سے دوچار ہے۔ یہ اضافہ‘ ایک ملین ڈالر سے بڑھاکر 5ملین ڈالر کردینے سے متعلق ہے۔ وزیر خارجہ ہند نے کہا کہ ’’آج ہمیں نیوکلیر اسلحہ میں اضافہ‘ مسلح تصادم ‘ پناہ گزینوں کا مسئلہ ‘ دہشت گردی‘ غربت اور بگڑتے ہوئے ماحولیات جیسے چیلنجوں کا سامنا ہے۔ ان چیلنجوں سے نمٹنے مزید موثر ہمہ فریقی نظام کی ضرورت ہے۔ اس لئے جن بنیادی اقدار اور اصولوں پر غیرجانبدار تحریک قائم کی گئی ہے وہ آج کے حالات سے مزید مناسبت رکھتے ہیں۔

جواب چھوڑیں