مختلف ناموں سے کئی پاسپورٹس کاحصول‘3افراد گرفتار

کمشنرٹاسک فورس نارتھ زون اورمقامی پولیس کے عہدیداروںنے جمعرات کوعابڈس‘ترمل گیری اورہمایوں نگر پولیس اسٹیشن کے حدودمیں مختلف مقامات پر بیک وقت دھاوے کرتے ہوئے تین افراد کو گرفتار کرلیاہے ۔ گرفتار شدگان میں حیدرعلی لالانی متوطن عابڈس‘بھانڈاکھاڈا نرسنگ رائو ترمل گیری اور محمدعبدالسلام متوطن ہمایوں نگر شامل ہیں۔ ان تین ملزموں پر فرضی اورجعلی ووٹر آئی ڈی کارڈ‘ آدھارکارڈ‘ راشن کارڈ داخل کرتے ہوئے مختلف ناموں سے غیرمجازطورپر کئی‘ تین یا دو انڈین پاسپورٹس حاصل کرنے کا الزام ہے ۔ ان ملزموں کے قبضہ سے 7 انڈین پاسپورٹس ، آدھار کارڈ، انتخابی شناختی کارڈ اور راشن کارڈ وغیرہ برآمد کرکے ضبط کرلئے گئے ہیں۔ ڈپٹی کمشنرٹاسک فورس حیدرآباد سٹی پی رادھا کشن راؤ نے بتایا کہ پولیس نے اس سلسلے میں 60 سالہ حیدر علی لالانی پیشہ فٹ ویر ساکن عابڈس نے حیدر علی لالانی اور وینکٹ شرما کے نام سے دو پاسپورٹس حاصل کئے ہیں۔پولیس نے 69 سالہ بھانڈاکھاڈا نرسنگ رائو کار ڈرائیور ساکن ترمل گیری کو گرفتار کرلیا جس نے بالا نرسنگ راؤ، بینی نرسنگ را ؤ اور بھانڈا کھاڈا نرسنگ راؤ کے نام سے 3 پاسپورٹس حاصل کئے ہیں ۔پولیس نے آج 53 سالہ محمد عبدالسلام کنٹراکٹ بزنس ساکن ہمایوں نگر کو گرفتار کرلیا جس نے محمد عبدالسلام اور محمد سلیم کے نام سے غیر قانونی طورپر 2 پاسپورٹس حاصل کئے ہیں۔ ڈی سی پی نے بتایا کہ پولیس نے ملزمین کے قبضہ سے 7 پاسپورٹس، 4 آدھار کارڈس، 2 ووٹر آئی ڈی کارڈس، 2 راشن کارڈس، 2 اسکولی سرٹیفکیٹس اور 3 سل فونس برآمد کرکے ضبط کرلئے۔ پولیس نے بتایا کہ حیدرعلی لالا نی نے 1997ء میں حیدر علی لالانی کے نام سے پہلا انڈین پاسپورٹ حاصل کیا جو اصلی تھا اور اس کے بعد لالانی نے پاسپورٹ کی تجدید کرواتے ہوئے امریکہ کا ویزا حاصل کیا۔ بعد ازاں سال 2000ء میں اس نے امریکہ میں کام کرنے کے لئے B1/B2 ویزا حاصل کیالیکن پہلا پاسپورٹ منسوخ کرنے کے بجائے امریکہ ویزا حاصل کرنا مشکل تھا۔ اس لئے اس نے سال 2000ء میں وینکٹ شرما کے نام سے فرضی راشن کارڈبنوایااوراس نام پر دوسرا پاسپورٹ حاصل کیا۔پھرشرماکے نام کے پاسپورٹ پرویزاکے لئے درخواست دی مگر امریکی قونصلیٹ چینائی نے ناکافی دستاویزات کے بناپر اس کے ویزاکی درخواست مسترد کردی۔ اس کے خلاف ترملگری پولیس نے تعزیرات ہند کے مختلف دفعات کے تحت مقدمہ درج کرلیا۔ ایک اور ملزم بھانڈا کھاڈا نرسنگ کارڈرائیورنے بھی سال 2000ء میں امریکہ جانے کے لئے بالا نرسنگ راؤ کے نام سے دوسراپاسپورٹ حاصل کیا اور اس پاسپورٹ پر اس نے امریکہ جانے کے لئے B1/B2 ویزا حاصل کرنے کے لئے درخواست دی جس کو مسترد کردیا گیا۔ سال2001میں اس نے فرضی راشن کارڈ پر بینی نرسنگ رائوکے نام پرپاسپورٹ بنوایا اور امریکی ویزے کے لئے درخواست دی جسے مسترد کردیاگیا۔ تیسری بار اس نے کھاڈانرسنگ رائو کے نام سے فرضی ووٹر آئی ڈی اور آدھار کارڈکے ذریعہ ایک اور پاسپورٹ دوسرے پتہ پر سال 2017ء میں حاصل کیا اور اس پر امریکہ ویزا حاصل کرنا چاہتا تھا جس کو مسترد کردیاگیا۔ ہمایوں نگر پولیس نے اس کے خلاف تعزیرات ہند کی دفعات کے تحت مقدمہ درج کرلیا۔ ایک اور ملزم محمد عبدالسلام نے پہلی مرتبہ 1998ء میں پاسپورٹ حاصل کیا اور اس نے پاسپورٹ کو محمد عبدالسلام کے نام سے تجدید کروائی۔ اس نے امریکی ویزا حاصل کرنے کے لئے محمدسلیم کے نام سے دوسرا پاسپورٹ بنانے کا فیصلہ کیا۔ اس نے امریکی کونسل میں B1/B2 ویزے کیلئے درخواست دی جس کو مسترد کردیا گیا ۔ ٹاسک فورس نے تینوں ملزمین کے مکانات پر دھاوے کرتے ہوئے انہیں گرفتار کرلیا اور مزید تحقیقات کے لئے ان ملزموںکو متعلقہ پولیس اسٹیشن کے حوالے کردیا۔

جواب چھوڑیں