جنوبی کوریا کی سابق صدر پارک کو 24سال کی جیل

جنوبی کوریا کی عدالت نے آج سابق صدر پارک گیون ہئے کو کرپشن اور اقتدار کے ناجائز استعمال پر جیل کی سزا دی ہے۔ سرکاری ذرائع نے یہ بات بتائی اور کہا کہ پارک کو کرپشن اور بدعنوانیوں کے الزامات کا سامنا پڑ رہا ہے۔ اس سلسلہ میں عدالتی کارروائی کی گئی اور انہیں 24سال جیل کی سزا دی گئی ہے۔ بی بی سی نے یہ بات بتائی اور کہا کہ سابق صدر پارک پر بدعنوانیوں اور اقربار پروری کے الزامات بھی عائد کئے گئے ہیں۔ انہیں کرپشن سے متعلق 18الزامات کا سامنا کرنا پڑے گا۔ تاہم انہوں نے عائد کردہ الزامات کی تردید کی۔ پارک جو کہ جنوبی کوریا میں 2013کے اوائل میں صدر کے عہدہ پر فائز ہوئی ہیں پہلی خاتون ہیں جو کہ اس ملک میں صدر کی ذمہ داریاں سنبھالی ہوئی تھیں۔ یہ بات خبررساں ادارہ یونہاپ نیوز ایجنسی نے بتائی۔ خبررساں ادارہ نے مزید بتایا ہے کہ پارک پر اپنے دوستوں کے ساتھ سازش کرنے کے بھی الزامات عائد ہیں۔ اس کے علاوہ دو چیاریٹیبل فائونڈیشنس کی رقومات میں بھی خرد برد کے الزامات کا انہیں سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ انہوں نے سیمسنگ لوٹے اور ایس کے سے 59.2بلین وون قبول کئے ہیں۔ خبررساں ادارہ نے مزید بتایا ہے کہ پارک نے بعض دوستوں کے ساتھ ساز باز کرکے دھوکہ دہی کی ہے اور ایسے افراد کی خدمات حاصل کی گئیں جنہیں سرکاری طورپر کوئی اختیارات نہیں تھے۔ اسکینڈل کے منظر عام پر آنے کے بعد دسمبر 2016میں پارک کا مواخذہ کیا گیا تھا اور آخر کار انہیں 10مارچ کو عہدہ سے ہٹا دیا گیا۔ پارک نے آج جبکہ انہیں سزا سنائی جارہی تھی عدالت میں موجود نہیں تھیں۔ وہ اکتوبر سے عدالت کی کارروائیوں کا احتجاج کرتے ہوئے بائیکاٹ کرتی آرہی ہیں۔ اے ایف پی کے مطابق جنوبی کوریا کی سابق صدر پارک کو 24سال کیلئے جیل کی سزا دی گئی ہے۔ ملک کی یہ پہلی خاتون قائد ہیں جو کہ نہ صرف صدر کے عہدہ پر فائز رہیں بلکہ انہیں عوامی برہمی کا سامنا بھی کرنا پڑا۔ ذرائع نے یہ بات بتائی اور کہا کہ 10ماہ سے زائد مدت کے دوران قانونی کارروائی کی جاتی رہی اور آخر کار پارک کو کئی جرائم کے الزامات میں یہ سزا سنائی گئی ہے جس میں رشوت ستانی اور اقتدار کا ناجائز استعمال شامل ہیں۔ پارک کو نہ صرف 24سال جیل کی سزا دی گئی ہے بلکہ 18بلین وون کا جرمانہ بھی عائد کیا گیا ہے۔ 66سالہ پارک عدالتی کارروائیوں کا بائیکاٹ کرتی آرہی ہیں۔ انہیں حکام نے تحویل میں لے لیا تھا۔ آج جبکہ فیصلہ سنایا گیا وہ عدالت میں موجود نہیں تھیں۔ ڈکٹیٹر پارک چونگ ہی کے قتل کے بعد ان کی دختر پارک نے 2013میں صدر کے عہدہ کی ذمہ داریاں سنبھالی تھیں۔ ذرائع نے بتایا کہ پارک کو 30سال تک کی جیل کی سزا اور کئی بلین ڈالرس جرمانہ عائد کیا جاسکتا ہے۔

جواب چھوڑیں