سلمان خان کی ضمانت کاآج فیصلہ

بالی ووڈ اداکار سلمان خان کو جودھپور (راجستھان) کی جیل میں ایک اور رات رہنا ہوگا کیونکہ جمعہ کے دن عدالت نے ان کی درخواست ضمانت پر اپنا فیصلہ ہفتہ تک محفوظ رکھا۔ ضلع و سیشن جج رویندر کمار جوشی نے 1998 کے سیاہ ہرن (چنکارا) شکار کیس میں درخواست ضمانت پر اپنا فیصلہ محفوظ رکھا۔ بالی ووڈ سوپر اسٹار کو جمعرات کے دن 5 سال کی جیل ہوئی تھی۔ وکلائے صفائی اور سرکاری وکیل ہفتہ کے دن 10:30 بجے اپنی اپنی دلیل دیں گے۔ باخبر ذرائع کے بموجب جج نے مزید کاغذات جیسے رورل کورٹ اور ہائی کورٹ میں پچھلے کیس کی سماعت کی فائل مانگی۔ سیشن کورٹ میں جمعہ کے دن سینئر وکیل مہیش بورا نے سلمان کا کیس پیش کیا۔ وہ 51 صفحات کی درخواست ضمانت لے آئے تھے۔ انہوں نے کہا کہ گواہوں کے بیان پر بھروسہ نہیں کرنا چاہئے کیونکہ اس سے شبہ کا فائدہ ملتا ہے۔ انہوں نے سوال اٹھایا کہ صرف سلمان کو کیوں سزا ہوئی ۔ سلمان اور بالی ووڈ کے دیگر ستاروں سیف علی خان‘ تبو‘ سونالی بیندرے اور نیلم نے یکم اور 2 اکتوبر 1998 کو جودھپور کے موضع کنکنی کے قریب جنگل میں مبینہ طورپر شکار کیا تھا۔ وہ ’’ہم ساتھ ساتھ ہیں‘‘ کی شوٹنگ کے لئے یہاں آئے ہوئے تھے۔ سلمان کو سزا سنائی گئی جبکہ دیگر 4 فلمی ستاروں اور مقامی شخص دُشینت سنگھ کو بری کردیا گیا۔ چیف جوڈیشیل مجسٹریٹ دیو کمار کھتری نے سلمان کو وائلڈ لائف پروٹیکشن قانون کی دفعہ 9/51 کے تحت سزا سنائی۔ سلمان‘ جودھپور سنٹرل جیل میں قیدی نمبر 106 ہیں۔ جیل میں قدم رکھنے کے بعد کل شام سلمان خان کا بلڈ پریشر بڑھ گیا تھا جو بعد میں نارمل ہوگیا۔ جیل عہدیدار وکرم سنگھ نے کہا تھا کہ جیل میں قدم رکھنے والے کا بی پی عام طورپر بڑھ جاتا ہے۔ سلمان خان کو جیل میں دال اور سبزی دی گئی۔ پینے کے لئے پانی کا ایک گھڑا فراہم کیا گیا۔ سلمان خان کو جہاں رکھا گیا ہے اسی کے قریب آسارام باپو کی کوٹھڑی بھی واقع ہے۔ سلمان کی سیکوریٹی یقینی بنانے جیل میں وسیع تر انتظامات کئے گئے ہیں کیونکہ انہیں کسی نے جان سے مارنے کی دھمکی دی تھی۔

جواب چھوڑیں