کانگریس کا 9 اپریل کو ملک گیر احتجاجی برت

جوابی کارروائی میں کانگریس نے آج کہا کہ اس کے ورکرس مختلف مسائل پر بی جے پی کا ’’جھوٹ‘‘ بے نقاب کرنے 9 اپریل کو تمام ریاستوں اور ضلع مستقروں پر ایک روزہ برت کا اہتمام کریں گے۔ قبل ازیں وزیراعظم نریندر مودی نے اعلان کیا تھا کہ پارلیمنٹ میں تعطل کے خلاف بطور احتجاج بی جے پی ارکان پارلیمنٹ 12 اپریل کو برت رکھیں گے۔ بی جے پی پر پلٹ وار کرتے ہوئے کانگریس نے کہا کہ پارلیمنٹ نہ چلنے دینے کے لئے حکومت ذمہ دار ہے۔ اس نے 23 دن کی تنخواہ نہ لینے کے این ڈی اے ارکان پارلیمنٹ کے فیصلہ کو ایک ’’حربہ‘‘ اور ’’ڈرامہ‘‘ قراردیا۔ مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب میں کانگریس کے قائد لوک سبھا ملیکارجن کھڑگے اور پارٹی کے سینئر ترجمان آنند شرما نے کہا کہ ان کی پارٹی کے ارکان پارلیمنٹ نے صدرنشین راجیہ سبھا سے ملاقات کی تھی کہ اجلاس کو غیرمعینہ مدت کے لئے ملتوی نہ کیا جائے تاکہ اسے مزید 2 ہفتوں کے لئے دوبارہ طلب کیا جاسکے۔ قومی اہمیت کے حامل مسائل پر بحث ہوسکے ۔ آنند شرما نے کہا کہ راہول گاندھی نے اعلان کیا ہے کہ تمام ضلع مستقروں پر برت رکھا جائے گا جس کا مقصد ملک میں امن ‘ بھائی چارہ اور ہم آہنگی کو پروان چڑھانا ہے۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ بی جے پی اور آر ایس ایس اپنے تفرقہ پسند ایجنڈہ کے ذریعہ سماج میں نفرت پھیلارہے ہیں۔ کانگریس اسے بے نقاب کرے گی۔ کانگریس صدر راہول گاندھی نے عوام سے اپیل کی ہے کہ وہ سماج میں امن اور ہم آہنگی برقرار رکھیں۔ کھڑگے نے بھی الزام عائد کیا کہ حکومت اور اس کے حلیف ‘ لوک سبھا میں گڑبڑ کررہے ہیں۔ یو این آئی کے بموجب کانگریس 9 اپریل کو ملک گیر برت رکھے گی تاکہ سماج کے مختلف طبقات کے مابین فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو بڑھاوا دیا جائے۔ اس برت کا ایک اور مقصد مرکز کی این ڈی اے حکومت اور بی جے پی کی ریاستی حکومتوں کو بے نقاب کرنا ہے کہ وہ دلتوں کے تحفظ میں ناکام رہی ہیں۔ کانگریس نے کہا کہ 2 اپریل کو بھارت بند کے دوران جو ہوا وہ بدبختانہ ہے۔ یہ ملک کے سماجی تانہ بانہ کے لئے انتہائی خطرناک ہے۔ بی جے پی کی مرکزی اور ریاستی حکومت نے تشدد روکنے اور دلتوں کو بچانے کے لئے کوئی اقدامات نہیں کئے لہٰذا اب کانگریس کے لئے یہ بات مزید اہمیت اختیار کرگئی ہے کہ وہ ان مشکل حالات میں ملک و قوم کی قیادت کرے۔

جواب چھوڑیں