رکسؤل‘ کٹھمنڈو ریلوے لائن بچھانے کا اعلان

ہندوستان ‘ بہار کے رکسول اور نیپال کے کٹھمنڈو کے درمیان اہم ریلوے رابطہ تعمیر کرے گا تاکہ عوام سے عوام کا ربط بڑھے اور خشکی بند ملک نیپال تک کارگو کی آسان سے منتقلی ہو۔ ہندوستانی اور نیپالی عہدیداروں کی وفد کی سطح کی بات چیت کے بعد یہ اعلان کیا گیا۔ بات چیت کی صدارت وزیراعظم نریندر مودی اور ان کے نیپالی ہم منصب کے پی شرما اولی نے کی تھی جو ہندوستان کے سہ روزہ دورہ پر ہیں۔ سرکاری بیان میں کہا گیا کہ دونوں وزرائے اعظم نے آمادگی ظاہر کی کہ نئی برقی ریل لائن بچھائی جائے جس کے لئے مالی امداد ہندوستان فراہم کرے گا۔ یہ لائن ہندوستان کے سرحدی شہر رکسول کو نیپال کے دارالحکومت کٹھمنڈو سے جوڑے گی۔ یہ تجویز اہمیت کی حامل ہے اور مارچ 2016 میں چین کے تبت کے ذریعہ نیپال تک ریل لائن بچھانے پر آمادگی کے 2 سال بعد آئی ہے۔ چین چاہتا ہے کہ کٹھمنڈو ‘ ہندوستان پر پوری طرح منحصر نہ رہے۔ اُسی سال چین نے نیپال کے ساتھ ایک ٹرانزٹ ٹریڈ معاہدہ بھی کیا تھا۔ نیپال تیسرے ملک سے تجارت کے لئے پوری طرح ہندوستانی بندرگاہوں پر منحصر ہے۔ اس کے علاوہ چین ‘ نیپال کو جوڑنے 3 شاہراہیں بھی تعمیر کررہا ہے۔ توقع ہے کہ یہ سڑکیں 2020 تک مکمل ہوجائیں گی۔ نیپال کے چین سے معاہدے ایسے وقت ہوئے تھے جب کٹھمنڈو ۔ نئی دہلی تعلقات 2015-16میں سرحدی ناکہ بندی کے بعد بگڑنے لگے تھے۔ 135 دن کی اس ناکہ بندی یا محاصرہ کے لئے کٹھمنڈو میں کئی لوگوں نے ہندوستان کو موردِ الزام ٹھہرایا تھا۔ ستمبر 2015 تا فروری 2016 اس ناکہ بندی نے نیپال کی معیشت مفلوج کردی تھی۔ چین ‘ نیپال میں اپنا اثرو رسوخ بڑھاتا جارہا ہے جس پر ہندوستان کو تشویش ہے کیونکہ وہ اپنے قریبی پڑوسی ملک میں اپنا اثرو رسوخ کھوتا جارہا تھا لیکن آج کے معاہدہ سے ہند۔ نیپال تعلقات میں نئی گرمجوشی کا اشارہ ملتا ہے۔ پی ٹی آئی کے بموجب باہمی تعلقات کو ٹھیک کرنے کی کوشش میں وزیراعظم نریندر مودی اور ان کے نیپالی ہم منصب کے پی شرما اولی نے آج وسیع تر بات چیت کی۔ دونوں نے آمادگی ظاہر کی کہ دفاع‘ سلامتی‘ ارتباط‘ تجارت اور زراعت کے کلیدی شعبوں میں دو طرفہ تعاون بڑھایا جائے۔ بات چیت کے بعد وزیراعظم مودی نے کہا کہ ہندوستان‘ مجموعی ترقی کی چاہت میں ہمیشہ نیپال کے ساتھ کھڑا رہے گا۔ انہوں نے زور دیا کہ دو پڑوسی ممالک کے درمیان گہرے تعاون سے نیپال میں جمہوریت مستحکم ہوگی۔ اولی نے جو چین سے قریبی تعلقات کے خواہاں دکھائی دیتے ہیں‘ کہا کہ ان کی حکومت دونوں ممالک کے درمیان بھروسہ پر مبنی تعلقات چاہتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں ہمارے تعلقات کو 21 ویں صدی کی حقیقتوں کے ساتھ نئی بلندیوں پر پہنچانے آیا ہوں۔ چین نواز موقف کے لئے جانے جانے والے 65 سالہ اولی‘ فروری میں دوسری مرتبہ وزیراعظم بنے۔ اولی کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس میں مودی نے کہا کہ خوشحال اور ترقی یافتہ نیپال کا‘ نیپالی وزیراعظم کا ویزن‘ ان کے سب کا ساتھ سب کا وکاس کے ویژن کے عین مطابق ہے۔ ہندوستان‘ نیپال کی مدد اس کی ترجیحات کے مطابق کرتا رہے گا۔ مودی نے کہا کہ دونوں ممالک ‘ کٹھمنڈو کو ہندوستان سے جوڑنے نئی ریلوے لائن بچھانے پر آمادہ ہوگئے ہیں۔ اولی نے مودی کو نیپال آنے کی دعوت دی۔

جواب چھوڑیں