کلگام میں سیکوریٹی فورسس کے ساتھ جھڑپیں‘ بشمول فوجی 5ہلاک

جموں وکشمیر کے ضلع کلگام میں عسکریت پسندوں کے ساتھ بندوقوں کی لڑائی میں ایک فوجی ہلاک ہوگیا جبکہ 4 شہری بشمول 2 کم سن لڑکے مقامی لوگوں اور سیکوریٹی فورسس کے مابین جھڑپوں میں مارے گئے۔مقامی لوگوں نے سیکوریٹی فورسس پر پتھر پھینکنے شروع کردیئے تھے جس پر جھڑپیں ہوئیں ۔ لگ بھگ 20 شہری زخمی ہوئے۔ سیکوریٹی فورسس نے کل رات ضلع کے خدوانی علاقہ کو گھیر لیا تھا۔ جانکاری ملی تھی کہ وہاں عسکریت پسند موجود ہیں۔ عسکریت پسندوں اور سیکوریٹی فورسس کے مابین صبح فائرنگ کا تبادلہ شروع ہوا۔ 3 فوجی زخمی ہوئے جن میں ایک بعدازاں زخموں کی تاب نہ لاسکا۔ ہسپتال میں دم توڑنے والے شہریوں کے نام 25 سالہ شرجیل احمد ‘ 14 سالہ فیصل الٰہی اور 15 سالہ بلال احمد تانترے بتائے گئے ہیں۔ آئی اے این ایس کے بموجب چہارشنبہ کے دن بندوقوں کی لڑائی میں ایک فوجی ہلاک اور دیگر 2 زخمی ہوئے۔ کلگام کے خدوانی علاقہ کے وانی محلہ میں سیکوریٹی فورسس اور احتجاجیوں کی جھڑپوں میں 15 سالہ فیصل الٰہی ‘ 17 سالہ بلال احمد ڈار اور 28 سالہ شرجیل شیخ کی موت ہوئی۔ حکام نے کلگام میں تمام اسکول اور کالجس بند کرنے کا حکم دیا۔ جنوبی کشمیر میں انٹرنیٹ سروس معطل کردی گئی۔ کلگام میں شہریوں کی موت کی خبر عام ہوتے ہی شمالی کشمیر کے سوپور ٹاؤن میں طلبا کی سیکوریٹی فورسس سے جھڑپ ہوئی۔ کشمیر یونیورسٹی سری نگر اور باندی پورہ میں بھی طلبا نے احتجاج کیا۔ کلگام کے وانی محلہ میں سیکوریٹی فورسس نے آخرکار دھماکو اشیا کا استعمال کرتے ہوئے اُس مکان کو اڑادیا جہاں سے لشکر طیبہ کے 2 یا 3 عسکریت پسند فائرنگ کررہے تھے۔ مکان تباہ ہوگیا جبکہ قریب میں واقع دیگر 2 مکانوں کو بھی آگ لگ گئی۔ کسی عسکریت پسند کے مارے جانے کی کوئی اطلاع نہیں ہے۔ سیکوریٹی فورسس کے ساتھ جھڑپوں میں زخمی ہونے والے 5 افراد کو خصوصی علاج کے لئے سری نگر بھیجا گیا ہے۔ باخبر ذرائع کا کہنا ہے کہ 40 سے زائد شہری زخمی ہوئے ہیں۔ جنوبی کشمیر کے اونتی پورہ کی اسلامک یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹکنالوجی بھی طلبا کے احتجاج سے دہل گئی۔ شمالی کشمیر کے باندی پورہ کے ڈگری کالج میں بھی احتجاج ہوا۔

جواب چھوڑیں