اسپین اورسعودی عرب میں معاہدہ پر دستخط ‘ولیعہد سلمان کی حکام سے بات چیت

اسپین اور سعودی عرب نے اسلحہ کی فروخت کے تعلق سے معاہدہ پر دستخط کئے ہیں۔ سعودی حکومت کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان میں یہ بات بتائی گئی ہے۔ بیان میں مزید بتایاگیا ہے کہ خلیجی عرب ریاست اور اسپین نے وارشپس کی فروخت کیلئے ایک معاہدہ وضع کرتے ہوئے اس پر دستخط کئے ہیں جس کے تحت اسپین ‘ سعودی عرب کو وارشپس فروخت کرے گا۔ بیان میں مزید بتایاہے کہ اس معاملت کا تخمینہ 1.8بلین ایروز کیا گیا ہے۔ سعودی عرب کے ولیعہد اور اسپین کے وزیر دفاع کے درمیان معاہدہ پر دستخط کئے گئے ہیں جس کے بعد سعودی عرب کو وارشپس کی فروخت کی راہ ہموار ہوگئی ہے۔ بتایاجاتا ہے کہ سعودی وزارت دفاع اور اسپین کے درمیان اس سلسلہ میں مختلف امور پر غور وخوض کیا گیا اور آخر کار اسپین کی جہاز ساز کمپنی نوانٹیا کے درمیان معاہدہ طئے پایا، جس کے بعد اب سعودی عرب کو وارشپس کی سربراہی عمل میں آئے گی۔ اس کے علاوہ ایک اور معاہدہ پر بھی دستخط کئے گئے ہیں لیکن تاحال اس سلسلہ میں مزید تفصیلات کا علم نہیں ہوا ہے۔ بتایاجاتا ہے کہ سعودی عرب ملٹری انڈسٹریز کمپنی اور نوانٹیا کے درمیان یہ معاہدہ طئے پایا ہے۔ اسپین کی وزارت دفاع کے ذرائع نے یہ بات بتائی اور کہاکہ اب اسپین سعودی عرب کی فوجی ضروریات کی تکمیل کی کوشش کرے گا کیونکہ دونوں ممالک کے درمیان معاہدہ طئے پایا ہے۔ اسپین کی گرین پیس اینڈ آکسفیام نے اسپین سے کہا ہے کہ وہ سعودی عرب کو فوجی آلات کی فروخت بند کردے۔ تاہم دونوں ممالک کے درمیان2015سے وارشپس کی خریداری کے تعلق سے مشاورت کا سلسلہ جاری ہے اور آخر کار اس معاہدہ پر دستخط ہوگئے ہیں۔ صنعت کے ایک عہدیدار نے اگریمنٹ کی تفصیلات کی وضاحت کی جبکہ نوانٹیا نے اس سلسلہ میں کوئی تبصرہ کرنے سے انکار کردیا ہے۔ سعودی عرب کے شہزادہ محمد بن سلمان جوکہ وزیر دفاع کی حیثیت سے بھی خدمات انجام دے رہے ہیں اسپین کے دورہ پر آئے ہوئے ہیں۔ انہوںنے یہاں کے شاہ فلپ سے بھی ملاقات کی۔ اس کے علاوہ انہوںنے وزیر اعظم مارویانو روجائے اور وزیر دفاع ایم ڈولیروز ڈی گاسفل سے بھی ملاقات کی اور چھ معاہدوں پر دستخط کئے ہیں جوکہ دفاع ‘ ٹرانسپورٹ‘ ثقافت ‘ ٹکنالوجی سے متعلق ہیں۔

جواب چھوڑیں