بی جے پی ہاری تو پاکستان میں جشن ہوگا: رکن اسمبلی سریندر سنگھ

بی جے پی رکن اسمبلی سریندر سنگھ نے کہا ہے کہ 2019 کا لوک سبھا الیکشن ’’اسلام بہ مقابلہ بھگوان‘‘ اور ’’پاکستان بہ مقابلہ ہندوستان‘‘ کے خطوط پر لڑا جائے گا۔ انہوں نے کہا ’’2019 کا چناؤ اسلام بہ نام بھگوان ہونے جارہا ہے‘‘۔ بھگوا جماعت کے رکن اسمبلی(ضلع بیریا) نے 11 اپریل کو اپنی پارٹی کے رکن اسمبلی کلدیپ سنگھ سینگر (اُناؤ عصمت ریزی کیس کے ملزم) کا دفاع کرکے تنازعہ پیدا کردیا تھا۔ انہوں نے کہا تھا کہ مجھے بتائیے 3 بچوں کی ماں کی عصمت ریزی کوئی کرتا ہے کیا؟ ۔ سینگر کو غلط طورپر پھنسایا جارہا ہے۔ کل رات یہاں ایک جلسہ عام میں سریندر سنگھ نے کہا کہ 2019 کا الیکشن پاکستان بہ مقابلہ ہندوستان ‘ اسلام بہ مقابلہ بھگوان کے خطوط پر ہونے والا ہے۔ ملک کے عزت دار لوگوں کو طے کرنا ہوگا کہ اسلام جیتے گا یا بھگوان۔ آپ کو طے کرنا ہوگا کہ بددیانت لوگ جیتیں گے یا مودی کی ایمانداری۔ سریندر سنگھ نے کہا کہ اس بار بی جے پی جیتی تو ملک کے عوام جشن منائیں گے اور اپوزیشن نے حکومت بنائی تو پاکستان میں ڈھول تاشے بجیں گے۔ لوگوں کو طے کرنا ہوگا کہ وہ بھگوان کے ساتھ ہیں اسلام کے۔ بھارت بھکتی‘ وِبھکتی(تفرقہ پسند طاقتوں) پر حاوی رہے گی۔ سریندر سنگھ نے سابق میں کہا تھا کہ بھارت کے ہندو راشٹر بنتے ہی صرف وہ مسلمان یہاں رہ سکیں گے جو ہندو کلچر میں جذب ہوجائیں۔ بہت کم مسلمان‘ محب وطن ہیں۔ ملک‘ ہندو راشٹر بنتے ہی ہمارے کلچر میں جذب ہونے والے مسلمان ہی یہاں رہ سکیں گے۔ جذب نہ ہونے والوں کو آزادی ہوگی کہ وہ کسی دوسرے ملک میں پناہ لے لیں۔

جواب چھوڑیں