کلدیپ سنگھ سینگر ‘ سی بی آئی تحویل میں

سی بی آئی نے جمعہ کے دن اُناؤ کیس کی تحقیقات کا آغاز کردیا۔ اس نے بی جے پی رکن اسمبلی کلدیپ سنگھ سینگر سے پوچھ تاچھ کی اور متاثرہ خاتون کا بیان درج کیا۔ سی بی آئی کی ایک ٹیم اُناؤ کے اس ہوٹل میں گئی جہاں متاثرہ خاتون کو پولیس پروٹیکشن میں رکھا گیا ہے۔ سی بی آئی عہدیداروں نے خاتون کے غمزدہ خاندان سے بھی بات چیت کی۔ ایک عہدیدار نے آئی اے این ایس کو یہ بات بتائی۔ ضلع اُناؤ کے بنگرمئو کے رکن اسمبلی سینگر کو جمعہ کی صبح سی بی آئی دفتر لکھنو لایا گیا۔ وہ وارانسی جارہے تھے۔ ایجنسی نے جمعرات کے دن ایف آئی آر درج کی تھی۔ باخبر ذرائع نے بتایا کہ رکن اسمبلی کی فون کال ڈیٹیل بھی منگوائی گئی ہے ۔ایجنسی نے جمعرات کے دن 3 ایف آئی آر درج کیں۔ پہلی ایف آئی آر میں سی بی آئی نے سینگر اور ششی سنگھ کا نام لیا ہے۔ ششی سنگھ وہ عورت ہے جس پر الزام ہے کہ وہ متاثرہ خاتون کو بی جے پی قائد کے بنگلہ پر لے گئی تھی۔ دوسری ایف آئی آر میں سینگر کے 4 ساتھیوں کا نام ہے۔ تیسری ایف آئی آر ‘ سینگر کے بھائی اتل سنگھ سینگر سے متعلق ہے جس کا دعویٰ ہے کہ متاثرہ خاتون کے باپ نے اس پر حملہ کیا تھا۔ اتل سنگھ فی الحال عدالتی تحویل میں ہے۔ سی بی آئی نے خصوصی تحقیقاتی ٹیم (ایس آئی ٹی) سے کیس اپنے ہاتھ میں لیا ہے۔ حکومت اترپردیش نے مرکز سے سی بی آئی تحقیقات کی درخواست کی تھی۔ 6 ملازمین پولیس تاحال معطل کئے جاچکے ہیں۔ ان پر الزام ہے کہ وہ متاثرہ خاتون کے باپ کو غیرقانونی طورپر پولیس اسٹیشن لے گئے تھے جہاں پر متاثرہ خاتون کے باپ کو پولیس والوں اور اتل سنگھ اور سینگر کے ساتھیوں نے زدوکوب کیا۔ پی ٹی آئی کے بموجب سی بی آئی نے بی جے پی رکن اسمبلی کلدیپ سنگھ سینگر کو آج پوچھ تاچھ کے لئے اپنی تحویل میں لے لیا۔ معاملہ کل ہی ایجنسی سے رجوع ہوا تھا۔سی بی آئی فوری حرکت میں آگئی۔ وہ 4میعاد سے رکن اسمبلی رہے سینگر کو علی الصبح 5 بجے کے قریب اپنے لکھنو دفتر لے آئی۔ سی بی آئی عہدیداروں کی ایک ٹیم مقام واردات جائے گی اور جیل عہدیداروں اور پولیس عہدیداروں کے علاوہ رکن اسمبلی کے ارکان خاندان سے بھی پوچھ تاچھ کرے گی۔

جواب چھوڑیں