سائنا نے سندھو کو ہراکر گولڈ میڈل جیت لیا

ہندوستانی شٹلر سائنا نہوال نے اہم مقابلے میں اولمپک میں سلور میڈل حاصل کرنے والی ہم وطن پی وی سندھو کے خلاف ایک بار پھر اپنا دبدبہ ثابت کرتے ہوئے 21 ویں دولت مشترکہ کھیلوں کے آخری دن اتوار کو خواتین سنگلز بیاڈمنٹن مقابلے میں گولڈ میڈل اپنے نام کرلیا۔ اسی کے ساتھ وہ ان کھیلوں میں سونے کے 2 تمغے جیتنے والی پہلی ہندوستانی بیڈمنٹن کھلاڑی بھی بن گئی ہیں۔ لیکن حال ہی میں عالمی نمبر ایک کھلاڑی بننے والے کڈمبی سری کانت کو فائنل میں شکست کے بعد چاندی کے تمغے پر اکتفا کرنا پڑا۔ سندھو اور سائنا نے جہاں خاتون سنگلز میں ملک کیلئے سونے اور چاندی کے تمغے جیتے وہیں مردوں کے سنگلز میں 3 دن قبل ہی دنیا کے نمبر ایک کھلاڑی بننے والے سری کانت مرد سنگلز میں ملک کیلئے سونے کے تمغے کی امیدوں کو پورا نہیں کرسکے۔ انہیں سابق نمبر ایک لی چونگ کے خلاف سخت مقابلے میں 21-19, 14-21, 14-21 سے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ سری کانت کو چاندی کے تمغے پر ہی صبر کرنا پڑا۔ حالانکہ ریو اولمپک میں چاندی کا تمغہ جیتنے والی سندھو نے دوسرے گیم میں بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔ انہوں نے دوسرے گیم میں 11۔8 کی برتری بنائی لیکن سائنا نے پھر سندھو کیلئے پوائنٹ لینا مشکل کردیا۔ دوسری جانب ٹیم مقابلے میں ملائیشاء کے لی چونگ ویئی کو ہرانے والے شری کانت سونے کے تمغے کے سنگلز مقابلے میں اپنی بہتر کارکردگی کو دہرا نہیں سکے اور 3 گیموں تک چلے سخت مقابلے میں وہ ویئی کے خلاف مقابلہ ہار کر سونے کا تمغہ گنوابیٹھے۔ وہیں مردوں کے ڈبلز میں ستویک رینکی ریڈی اور چراغ شیٹی کی ہندوستانی جوڑی کو بھی سونے کے تمغے کے میچ میں ہار کے بعد چاندی کے تمغے پر اکتفا کرنا پڑا۔ نوجوان ہندوستانی جوڑی کو انگلینڈ کے مارکس ایلس اور کرس لینگرچ کے خلاف راست سیٹوں میں 13-21, 16-21 سے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ دولت مشترکہ کھیلوں میں ایسا موقع پہلی بار تھا جب دونوں ہندوستانی کھلاڑیوں کے درمیان ویمنس سنگلز کے سونے کے تمغے کیلئے مقابلہ ہوا۔ سائنا اور سندھو فائنل کے سلسلہ میں کافی پرجوش تھیں اور لندن اولمپک میں برانز میڈل جیتنے والی سندھو نے میچ میں اچھا آغاز کرتے ہوئے پہلے گیم میں ہی 11۔6 کی برتری قائم کرلی۔ سائنا نے پہلے گیم میں مسلسل پانچ پوائنٹ لئے اور چھ گیم پوائنٹ حاصل کرتے ہوئے 22 منٹ میں پہلا گیم 21۔8 سے نپٹا دیا۔دوسرے اور تیسرے گیم میں بھی سائنا کا مظاہرہ بہتر رہا۔

جواب چھوڑیں