سپریم کورٹ کے فیصلہ سے ایس سی؍ ایس ٹی میں ناراضگی

درج فہرست طبقات وقبائل کے خلاف زیادتیوں کے ملزمین کی گرفتاری کے تعلق سے سپریم کورٹ کے فیصلہ وجہ سے پیدا شدہ صورتحال کا حکومت کی جانب سے جائزہ لیا جارہا ہے تاکہ اس سلسلہ میں پیدا شدہ ناراضگی اور بے چینی کو دور کرنے کی راہ ہموار ہوسکے۔ حکومت اس بات کی کوشش کررہی ہے کہ ایک آرڈیننس کا نفاذ عمل میں لاتے ہوئے درج فہرست طبقات اور قبائیل سے متعلق سابق دفعات کے احیاء کی راہ ہموار ہوسکے۔ انسداد مظالم ایکٹ کے تعلق سے حکومت مختلف ا مور کا جائزہ لے رہی ہے اور اس بات پر غور کررہی ہے کہ ایک آرڈیننس کا نفاذ عمل میں لایا جائے تاکہ ایس سی؍ ایس ٹی ایکٹ سے متعلق سابق قوانین کا احیاء کیا جاسکے۔ سرکاری سطح پر ہونے والی بات چیت کے حوالے سے ذرائع نے بتایا ہے کہ حکومت کے آرڈیننس کے نفاذ کی خواہاں ہیں تاکہ سابق طریقہ کار کے احیاء کی راہ ہموار ہوسکے ۔ اس سلسلہ میں ایک بل پارلیمنٹ کے مانسون سیشن کے دوران پیش کیا جائے گا جس کا آغاز جولائی سے ہونے والا ہے۔ حکومت اس بات کی کوشش کررہی ہے کہ سپریم کورٹ کے حالیہ فیصلہ کی وجہ سے درج فہرست طبقات اور قبائل میں پیدا شدہ برہمی کا انسداد کیا جاسکے۔ درج فہرست طبقات اور قبائل کا یہ کہنا ہے کہ مظالم ڈھانے والوں اور زیادتیاں کرنے والوں کیخلاف جو کارروائی کی جاتی تھی اس میں سپریم کورٹ کے حالیہ فیصلہ کی وجہ سے نرمی ہوگئی ہے۔ حکومت اس سلسلہ میں ایک نئے رہنمایانہ خطوط کی بھی خواہاں ہے تاکہ درج فہرست طبقات اور قبائل کیخلاف زیادتیوں کے مرتکب ہونے والے ملزمین کی گرفتاری کے تعلق سے کوئی نرمی نہ کی جاسکے۔ ذرائع نے یہ بات بتائی اور کہاکہ حکومت سپریم کورٹ کے آرڈر کی وجہ سے پیدا شدہ صورتحال سے نمٹنے کی کوشش کررہی ہے اور اس کیلئے کوئی متبادل طریقہ کار اختیار کرنا ہوگا اگر آرڈیننس اجراء کردیا جائے تو اس کو بھی بل میں تبدیل کرنا ہوگا اور پارلیمنٹ میں منظوری کرنی پڑے گی۔ ایک سرکاری عہدیدار نے یہ بات بتائی۔ دلت گروپ کی جانب سے سپریم کورٹ کے فیصلہ کے خلاف دو اپریل کو احتجاج کیا گیا اور کہاگیا کہ سپریم کورٹ نے 20مارچ کو جو فیصلہ کیا ہے اس سے دلتوں سے متعلق قانون میں نرمی کی گئی ہے۔ وزیر اعظم نریندرمودی نے جمعہ کو ادعا کیا ہے کہ ان کی حکومت درجہ فہرست طبقات اور قبائل پر زیادتیوں کے تدارک کی خواہاں ہیں اور اس سلسلہ میں قانون میں کوئی نرمی نہیں کی جائے گی۔ انہوںنے کہا تھا کہ وہ یقین دہانی کرواتے ہیں کہ درج فہرست طبقات اور قبائل پر زیادتیاں کرنے والوں کیخلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔

جواب چھوڑیں