کٹھوا کیس :7ملزمین کو پٹھان کوٹ جج کے سامنے پیش کیا جائے گا

 کٹھوا عصمت ریزی وقتل کیس میں 8کے منجملہ 7ملزمین کو آج سخت سیکیورٹی کے درمیان لاگیا جنہیں ضلع وسیشن کورٹ میں پیش کیا جائے گا۔ کیس جس میں عصمت ریزی اور قتل ایک 8سالہ لڑکی کا کیا گیا ہے جن کا کٹھواضلع کے قبائلی طبقہ سے تعلق تھا اور کیس کو سپریم کورٹ کی جانب سے جموں وکشمیر سے پٹھان کوٹ منتقل کیا گیا تاکہ صاف ستھری انداز میں مقدمہ چلایا جاسکے۔ 7ملزمین کو پولیس بس کے ذریعہ عدالتی کاملکس قدیم پٹھان کوٹ دہلی قومی شاہراہ لایا گیا ہے اور اسے ضلع سیشن جج کے تیجویندر سنگھ کے سامنے پیش کیا جائے گا۔ آٹھواں ملزم ایک کم عمر لڑکا ہے وہ کٹھوا کی جونیل کورٹ (بچوں کی عدالت) میں مقدمہ کا سامنا کر رہا ہے۔ عدالت عظمی نے 7مئی کو یہ بھی ہدایت دی تھی کہ روزانہ کی اساس پر کیمرا ٹرائل‘ اس کیس میں چلایا جائے۔ پٹھان کوٹ بار اسو سی ایشن صدر ریشپل ٹھاکر نے کہا کہ یہ پہلا اس قسم کا اعلیٰ سطحی کیس ہے جس کی سماعت عدالت میں ہوگی۔ حکومت پنجاب نے اس کیلئے وسیع تر سیکیورٹی انتظامات کئے ہیں۔ عدالت کے اندر اور باہر پولیس والوں کی بڑی تعداد تعینات کی گئی ہے جن میں خاتون پولیس ملازمین بھی ہیں۔ سی سی ٹی وی کیمروں کی بھی تنصیب عمکل میں لائی گئی ہے تاکہ رکاوٹیں ڈالنے والوں پر نظر رکھی جاسکے۔ یہ کیس ریاستی حکومت اتحاد شرکاء ٹی ڈی پی اور بی جے پی کے درمیان وقار کا مسئلہ بنا ہوا ہے۔ زعفری پارٹی کو اپنے دور دراز چودھری لال سنگھ اور چندرپرکاش گنگا کو معزول کرنا پڑا تھا جنہوں نے ’’ہندو ایکتا منچ‘‘ کی ریالی میں کیس کے ملزمین کی تائید میں حصہ لیا تھا۔

جواب چھوڑیں