کیرانہ، نور پور میں کرپشن، بی جے پی کی شکست کی وجہ، پارٹی ایم ایل اے

بی جے پی کو کیرانہ لوک سبھا اور نور پور اسمبلی ضمنی انتخابات جو اترپردیش میں ہوئے تھے ، شکست کا سامنا کرنا پڑا ، جس کے ساتھ ہی یوگی آدتیہ ناتھ حکومت کے خلاف تنقیدوں کا سلسلہ شروع ہوگیا ہے اور اس پر الزام عائد کیا گیا ہے کہ اس نے کرپشن کو بڑے پیمانہ پر حوصلہ افزائی کی ہے اور یہی اس کا نتیجہ ہے ۔ بی جے پی کے دو ایم ایل ایز جس میں سے ایک کا تعلق بلیہ سے ہے اور دوسرے کا ہردوئی ضلع سے ہے ، انہوں نے نریندر مودی کی ستائش کی ، لیکن یوگی اور ان کی حکومت پر الزام عائد کیا کہ وہ کرپشن پر قابو پانے میں ناکام ہوگئی ہے ، جس کی وجہ سے شکست کا منہ دیکھنا پڑا۔ سہیل دیو بھارتیہ سماج پارٹی صدر اور یوپی کابینی وزیر اوم پرکاش رائے بہار نے بھی بی جے پی حکومت کے خلاف اپنی آواز اٹھائی ہے کہ کرپشن میں اضافہ کا یہ نتیجہ ہے۔ ضلع ہردوئی کے گوپا ماؤ اسمبلی حلقہ کے بی جے پی ایم ایل اے شیام پرکاش نے آج یہ الزام عائد کیا کہ ریاستی عہدیدار بدعنوان ہیں ، کسان ، حکومت سے خوش نہیں ہے ۔ اس کے علاوہ کئی ایسی وجوہات بی جے پی کی شکست کے پس پشت ہیں ۔ اگرچہ کہ ایم ایل اے نے کہا کہ وہ حکومت کے خلاف نہیں ہے ، لیکن الزام عائد کیا کہ عہدیدار غلطیوں کے مرتکب ہوئے ہیں۔ سابق حکومت کا تقابل کرنے پر کرپشن میں مزید اضافہ ہوا ہے ، اسی وجہ سے میں نے برہمی ظاہر کی ہے۔ شیام پرکاش نے ایک پانچ سطری نظم بھی فیس بک پر پوسٹ کیا ہے ، جس میں یہ دعویٰ کیا گیا ہے کہ ہنوز ملک کے انتہائی مقبول لیڈر ہیں اور بی جے پی کو کوئی بھی شکست نہیں دے سکتا ۔ ایک اور بی جے پی ایم ایل اے جس کا تعلق بیریا اسمبلی حلقہ بلیا ضلع سے ہے ، سندر سنگھ نے کیرانہ میں شکست کے بعد اپنی تشویش کا اظہار کیا ہے۔ وزیر اعظم مودی نے مہم نہیں چلائی ، لیکن یوگی آدتیہ ناتھ نے ایسا کیا ، لہٰذا چیف منسٹر یہ انتخابات ہار گئے اور یہ دعویٰ کیا کہ سارا اپوزیشن مودی کے خلاف ہوگیا ہے ۔ انہوں نے بھی الزام عائد کیا کہ حکومت کی مشنری کرپشن کا شکار ہے ، جس کی وجہ سے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ ساری حکومت کرپشن میں ملوث ہے اور لوگوں کو بہبود کی اسکیمات کے فوائد حاصل نہیں ہورہے ہیں۔ بی جے پی ایم ایل اے نے یہ بات کہی ۔ ایس پی ایس پی صدر اوم پرکاش رج بہار نے بھی الزام عائد کیا کہ ریاست کی مشنری کرپٹ ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ بی جے پی کو انتخابات میں شکست اٹھانی پڑی ۔ نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر کو ان عہدیداروں کے ساتھ سختی سے نمٹنا ہوگا، ورنہ 2019ء میں لوگ بی جے پی کی کسی بھی طرح تائید نہیں کریںگے اور مودی کے تمام اچھے کام ضائع ہوجائیںگے۔

جواب چھوڑیں