سکریٹریٹ ملازمین کیلئے افطار پارٹی ، نظام کی حکمرانی کی یاد تازہ

ڈپٹی چیف منسٹر تلنگانہ محمد محمود علی نے ریاستی چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ کی ستائش کرتے ہوئے کہا ہے کہ انہوں نے (چندر شیکھر راؤ نے) سکریٹریٹ ملازمین کے لیے پہلی بار افطار پارٹی کا اہتمام کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ گویا نظام کی حکمرانی کا احیاء ہوا ہے۔ افطار پارٹی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے محمود علی نے یاد دلایا کہ نظام کے زمانہ میں وہ (نظام) ، عید رمضان ، دیوالی اور دسہرہ جیسی تمام تقاریب میں شرکت کیا کرتے تھے۔ ریاست تلنگانہ کی تشکیل کے بعد ہمارے چیف منسٹر نے اس کا احیاء کیا ہے۔ سکریٹریٹ ملازمین کی افطار پارٹی میں ریاست کے سینئر عہدیدار ، پرنسپال سکریٹری جنرل ایڈمنسٹریشن ڈپارٹمنٹ آدھار سنہا ، اے کے گوئل ، محکمۂ اقلیتی بہبود کے مشیر اے کے خان اور محکمۂ اقلیتی بہبود کے عہدیداروں وغیرہ نے شرکت کی ۔ محمود علی نے بتایا کہ سرکاری ملازمین کی تائید سے ریاستی بجٹ میں اضافہ کیا گیا ہے ۔ 2013-14 کے بجٹ میں تلنگانہ بجٹ کا حصہ صرف 60 ہزار کروڑ کے درمیان تھا۔ اب چار سال میں صرف تلنگانہ کے بجٹ میں 1.75 لاکھ کروڑ کا اضافہ کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ ریاست نے ملک کی ترقی میں اوّلین موقف حاصل کیا ہے۔ ریاستی حکومت نے اقلیتوں ، درجِ فہرست اقوام و قبائل اور پسماندہ طبقات کے لیے بہبودی اسکیم پر عمل شروع کیا ہے۔ فلاح و بہبود ہی کے کاموں پر اب 60 ہزار کروڑ روپئے خرچ کیے جارہے ہیں۔

جواب چھوڑیں