کشمیر میں سنگبازوں سے نمٹنے سی آرپی ایف کا ویمن یونٹ

سی آرپی ایف جاریہ ماہ کے وسط سے 800 خاتون کمانڈوز کا خصوصی یونٹ شروع کرنے والی ہے جو جموں وکشمیر میں سنگبازوں سے نمٹے گا۔ سرحدی ریاست میں خواتین بھی سنگباری کرنے لگی ہیں۔ سنٹرل ریزروپولیس فورس نے جو جموںوکشمیر میں ریاستی پولیس کے ساتھ داخلی سیکیوریٹی سے نمٹ رہی ہے اسپیشل ویمن یونٹ قائم کرنے کا فیصلہ اس لئے کیا کہ گڑبڑزدہ ریاست میں خاتون سنگبازوں کی تعداد بڑھتی جارہی ہے۔ سی آرپی ایف کے مردکمانڈوزجب بھی خاتون سنگبازوں کے خلاف کاروائی کرتے ہیں انہیں انسانی حقوق کارکنوں کی تنقید کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ خاتون کمانڈوز فی الحال سری نگر کے سی آرپی ایف ٹریننگ سنٹر میں تربیت حاصل کررہی ہیں۔ فورس نے طئے کیا ہے کہ خاتون کمانڈوز کو مردکمانڈوز کے ساتھ وادی میں جب بھی سنگباری ہو تعینات کیاجائے۔ سی آرپی ایف کے انسپکٹر جنرل ذوالفقار حسن نے آئی اے این ایس کو بتایاکہ سنگباری کے واقعات جموں وکشمیر میں سیکیوریٹی فورسس کے لئے چیلنج بنتے جارہے ہیں۔ یہ عسکریت پسندی سے بڑا چیلنج ہے۔ نوجوان لڑکے عام طور پر گروپ بناکر سنگباری کرتے ہیں۔ خاتون سنگبازوں کی تعداد بھی بڑھتی جارہی ہے۔

جواب چھوڑیں