چھوٹے تاجروں کی ریالی ودھرنا۔تمباکو اشیاء کی فروخت پر تحدیدات‘ مرکز کے مجوزہ فیصلہ کے خلاف احتجاج

فیڈریشن آف ریٹیلرس اسو سی ایشن آف انڈیا کی اپیل پر شہر اور ریاست تلنگانہ بھر میں آج خوردہ بازار (ریٹیل مارکٹ)کے بیوپاریوں نے احتجاج منظم کیا۔ ریٹیلس اسٹور پر تمباکو اشیاء کی فروخت پر امتناع سے متعلق مرکزی حکومت کے مجوزہ فیصلہ کے خلاف یہ احتجاج منظم کیا گیا۔ بتایا جاتا ہے کہ مرکزی حکومت‘ ملک بھر میں ریٹیلس اسٹورس پر تمباکو اشیاء کی فروخت پر امتناع سے متعلق قانون لانے والی ہے۔ مرکز کے اس مجوزہ اقدام کے خلاف شہر حیدرآباد میں خوردہ بیوپاریوں نے جمعرات کے روز نیکلس روڈ پر احتجاجی ریالی نکالی اور دھرنا منظم کیا۔ فیڈریشن کے نائب صدر محمد صلاح الدین نے صحافیوں کو بتایا کہ مرکزی اور ریاستی حکومتیں‘ چھوٹے کاروباریوں کو پریشان کر رہے ہیں۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ مختلف تحدیدات کے بہانے ان تاجرین کو ہراساں کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریٹیل دکانات پر روزہ کی اشیاء کے ساتھ تمباکو اشیاء یعنی پان مسالہ‘ سگریٹ بھی فروخت کئے جاتے ہیں جن کی وجہ سے دکانداروں کو تھوڑا بہت فائدہ ہوتا ہے مگر اب مرکزی حکومت‘ تمباکو اشیاء کی فروخت پر امتناع عائد کرنے کیلئے ایک نیا قانون لانے والی ہے۔ حکومت کے اس مجوزہ اقدام سے چھوٹے بیوپاریوں کی مالی پریشانیوں میں مزید اضافہ ہونے کا امکان ہے۔ ریاست تلنگانہ میں چھوٹے بیوپاریوں کی تعداد 4لاکھ کے قریب ہے۔ اگر حکومتیں‘ تمباکو اشیاء کی فروخت پر امتناع عائد کرتی ہیں تو ان چار لاکھ خوردہ فردشوں کے مسائل میں مزید اضافہ ہوگا۔ پہلے سے ہی جی ایس ٹی اور نوٹ بندی کی وجہ سے خوردہ بازار مسائل سے دوچار ہیں۔ انہوں نے چیف منسٹر تلنگانہ کے چندرشیکھر رائو سے اپیل کی ہے کہ وہ چھوٹے تاجروں کے مفادات کے تحفظ کو یقینی بنانے کے اقدامات کریں۔ مرکز کے مجوزہ فیصلہ کے خلاف آج ملک بھر میں چھوٹے تاجرین نے احتجاج منظم کیا ہے۔ اس موقع پر کے یادو‘ آننت‘ شنکر اور دیگر موجود تھے۔

جواب چھوڑیں