اسد حکومت کی جانب کلورین گیس کے استعمال پر اقوام متحدہ کی تصدیق

اقوام متحدہ نے ایک سال قبل شام کے شہرڈوما میں اسد حکومت کی جانب سے شہریوں کے خلاف کیمیائی گیس’کلورین‘ کے استعمال کی تصدیق کردی ہے۔ذرائع کے مطابق اقوام متحدہ کی کیمیائی ہتھیاروں پر پابندی کی ذمہ دار ایجنسی نے دمشق کے شمالی قصبہ دوما میں اپریل 2017ء کو کیے گئے ایک کیمیائی حملے کی تحقیقات کے لیے کمیٹی قائم کی تھی۔ ماہرین پر مشتمل اس کمیٹی نے کئی ماہ تک جاری رہنے والی تحقیقات کے بعد کہا ہے کہ اسد حکومت دوما میں شہریوں پر کلورین گیس کے استعمال کی مرتکب ہوئی تھی۔’یو این‘ ایجنسی کا کہنا ہے کہ ہمیں دوما میں اعصابی گیس کے استعمال کے شواہد نہیں ملے مگر کلورین گیس کے استعمال کے ٹھوس ثبوت موجود ہیں۔اقوام متحدہ کے ماہرین نے دوما میں ہونے والے کیمیائی حملوں کے بعد 7 مقامات سے کوئی ایک سو سے زاید نمونے جمع کیے تھے۔  یہ نمونے اپریل میں ہونے والے کیمیائی حملے کے دو ہفتے بعد حاصل کیے گئے تھے۔تحقیقی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ دوما میں اعصابی گیس کے استعمال کا کوئی ثبوت موجود نہیں البتہ شامی فوج کی طرف سے استعمال کردہ اسلحہ کی باقیات میں کلورین گیس کی موجودگی کے شواہد ملے ہیں۔طبی ماہرین اور امدادی کارکنوں کا کہنا ہے کہ شامی فوج کی طرف سے دوما میں ایک گیس بیرل بم گرایا گیا تھا جس کے نتیجے میں 40 افراد دم گھٹنے سے ہلاک ہوگئے تھے۔

جواب چھوڑیں