لوک سبھا اور اسمبلیوں کے بہ یک وقت انتخابات کی مخالفت

ترنمول کانگریس اور بی جے پی کی حلیف گوا فارورڈ پارٹی نے لوک سبھا اور ریاستی اسمبلیوں کے بہ یک وقت انتخابات کی آج مخالفت کی۔ ترنمول کانگریس قائد اور رکن پارلیمنٹ کلیان بنرجی نے نئی دہلی میں لا کمیشن کے اجلاس میں شرکت کے بعد اخباری نمائندوں سے کہا کہ یہ خیال دستور اور جمہوریت کی اسپرٹ کے خلاف ہے۔ ترنمول کانگریس قائد نے اپنی پارٹی کا موقف دُہرایا اور کہا کہ بہ یک وقت انتخابات کا آئیڈیا قابل عمل نہیں ہے۔ مرکز یا ریاستی حکومت میں مخلوط حکومت زوال سے دوچار ہوجائے تو پھر کیا ہوگا ۔ کیا ایک یا 2 سال میں پورے ملک میں پھر الیکشن ہوگا۔ بہ یک وقت انتخابات سے سرکاری خزانہ کی کثیر رقم اور وقت کی بچت کی بات کرنے پر بنرجی نے کہا کہ ترجیحات کے معاملہ میں دستور اور جمہوریت کو مالی امور پر فوقیت ملنی چاہئے۔ گوا فارورڈ پارٹی کے صدر وجئے سردیسائی نے کہا کہ ہم گوا میں بی جے پی کے حلیف ہیں لیکن ہم اس خیال کی مخالفت کرتے ہیں۔ مجوزہ سسٹم میں علاقائی جماعتیں اپنی آواز کھودیں گی۔ انہوں نے پوچھا کہ کسی ریاست کا چیف منسٹر ‘ ریاستی اسمبلی کی تحلیل کی سفارش کردے تب کیا ہوگا۔ سر دیسائی نے جو گوا میں بی جے پی زیرقیادت حکومت میں وزیر زراعت ہیں‘ کہا کہ خیال اچھا ہے لیکن اس کے چند برائے نام فائدے ہیں۔ بہ یک وقت الیکشن‘ وفاقیت کی روح کے خلاف ہے جو دستور کا بنیادی پہلو ہے۔ ایک ملک ایک الیکشن کے آئیڈیا کو آگے بڑھاتے ہوئے لا کمیشن نے ہفتہ کے دن سیاسی جماعتوں سے بات چیت شروع کی ہے۔

جواب چھوڑیں