چیف جسٹس حیدرآباد ہائی کورٹ کی حلف برداری

جسٹس ٹی بھاسکرن نائیر رادھا کرشنن نے ہفتہ کو حیدرآباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کا حلف لیا۔ راج بھون میں11 بجے دن منعقدہ سادہ پر اثر پروگرام میں تلنگانہ اور آندھرا پردیش کے گورنر ای ایس ایل نرسمہن نے جسٹس رادھا کرشنن کو حلف دلایا ۔ ریاستی چیف سکریٹری ایس کے جوشی نے گورنر نرسمہن کو بتایا کہ صدر جمہوریہ ہند رام ناتھ کووند نے جسٹس ٹی بھاسکر ن رادھا کرشنن کو حیدرآباد ہائی کورٹ کا جسٹس نامز دکیا ہے ۔ جسٹس کرشنن کی تقریب حلف برداری میں چیف منسٹر تلنگانہ کے چندر شیکھر راؤ ، تلنگانہ اسمبلی میں قائد حزب اختلاف کے جانا ر یڈی، کونسل میں قائداپوزیشن محمد علی شبیر، ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی، ڈپٹی چیف منسٹر آندھرا پردیش کے ای کرشنا مورتی، تلنگانہ قانون ساز کونسل کے صدرنشین سوامی گوڑ، اسپیکر ریاستی اسمبلی ایس مدھو سدھن چاری، ریاستی وزیر داخلہ این نرسمہا ریڈی، وزیر قانون اے اندرا کرن ریڈی ، مئیر جی ایچ ایم سی بی رام موہن، ہائی کورٹ، سیول وکریمنل کورٹس کے ججس، وزراء ، ارکان اسمبلی وکونسل اور دیگر عہدیدار شریک تھے ۔ یہاں اس بات کا تذکرہ ضروری ہے کہ تقریباً3 سال کے عرصہ کے بعد حیدرآباد ہائی کورٹ کیلئے مستقل چیف جسٹس کا تقرر کیا گیا ہے ۔ چیف جسٹس حیدرآباد ہائی کورٹ کی حیثیت سے حلف لے چکے جسٹس ٹی بھاسکرن رادھا کرشنن،29 اپریل 1959 کو ریاست کیرالا کے مقام کولم میں پیدا ہوئے ۔ انہوںنے قانون کی تعلیم کرناٹک میں مکمل کی ۔ وہ ،1983 میں تیرووننتھا پورم بار کونسل کے رکن بنے ایرنا کولم میں بحیثیت وکیل اپنے کیرئیر کا آغاز کرنے والے ٹی رادھا کرشنن، اس کے بعد کبھی بھی مڑکر پیچھے نہیں دیکھا ۔2004 میں انہیں کیرالا ہائی کورٹ کا جج بنایا گیا ۔ حیدرآباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کا حلف لینے سے قبل انہیں18 مارچ2017 کو چھتیس گڑھ ہائی کورٹ کا چیف جسٹس مقرر کیا گیا تھا۔

جواب چھوڑیں