نتیش کمار کو جنتادل (یو )کا موقف طئے کرنے کا اختیار

بی جے پی کی حلیف جنتادل یو نے آج اپنے صدر اور چیف منسٹر نتیش کمار کو اختیاردیا کہ وہ سیاسی امورپر بشمول بہاراسمبلی ولوک سبھا الیکشن پارٹی کے موقف کو قطعیت دیں۔ پارٹی کی قومی عاملہ نے یہاں اپنے اجلاس میں جس میں اس کے اعلیٰ قائدین بشمول نتیش کمار نے شرکت کی بہ یک وقت انتخابات کی تائید کی تاہم اس نے دیگر سیاسی جماعتوں سے بات چیت کے ذریعہ اتفاق رائے پر زوردیا۔ عاملہ نے شہریت ترمیمی بل کی پھر مخالفت کی جس کی رُو سے افغانستان ، بنگلہ دیش یا پاکستان سے آنے والے ہندو، سکھ، بدھسٹ، جین، پارسی اور عیسائیوں کو ہندوستان میں 6سال قیام کے بعد شہریت مل جاتی ہے۔ جنتادل یو نے کہا کہ شہریت کی بنیاد، مذہب نہیں ہوناچاہئیے۔ جنتادل یو قائدین نے ان اطلاعات کو غیراہم قراردینے کی کوشش کی کہ 2019ء کے لوک سبھا الیکشن کے لئے بی جے پی اور این ڈی اے جماعتوں میں اختلافات پائے جاتے ہیں۔ پارٹی جنرل سکریٹری سنجے کمار جھا نے کہا کہ یہ بعد میںطئے ہوگا کہ کونسی پارٹی کتنی نشستوں پر الیکشن لڑے گی۔ این ڈی اے متحدہ الیکشن لڑے گا اور بہار میں فاتح رہے گا۔یواین آئی کے بموجب بی جے پی کے ساتھ جاری بحران کے درمیان جنتادل یو کی قومی عاملہ کا اجلاس اتوار کے دن نئی دہلی میں شروع ہوا جس میں لوک سبھا اور اسمبلی الیکشن کی حکمت عملی طئے ہوگی۔ پارٹی صدر اور چیف منسٹر بہار نتیش کمار پٹنہ سے نئی دہلی پہنچے اور انہوں نے اپنی پارٹی کے عہدیداروں سے ملاقات کی۔

جواب چھوڑیں