نواز شریف کے داماد کیپٹن صفدر گرفتار

پاکستانی حکام نے آج معزول وزیر اعظم نواز شریف کے داماد محمد صفدر کو آج گرفتار کرلیا ۔ لندن میں لگژری فلیٹ کو ان کے خاندان کی جانب سے خریدنے کے معاملہ میں رشوت ستانی پر گذشتہ جمعہ کو ایک عدالت نے ان کے غیاب میں 10 سال کی سزائے قید سنائی ۔ نواز شریف کی دختر مریم نواز کو ان کا سیاسی وارث سمجھا جاتا ہے ، جنہیں سات سال کی سزائے قید سنائی گئی ہے ، جب کہ ان کے شوہر کو ایک سال کی جیل کی سزا سنائی گئی ہے۔ مبصرین کا خیال ہے کہ پاکستان میں آئندہ 25 جولائی کو ہونے والے انتخابات سے قبل مذکورہ سزائیں پاکستان مسلم لیگ ۔ نواز پر ایک کاری ضرب ہیں۔ قبل ازیں موصولہ اطلاع میں کہا گیا تھا کہ سابق وزیراعظم نواز شریف کے داماد اور مسلم لیگ (ن) کے رہنما کیپٹن (ر) صفدر نیب کو گرفتاری دینے کے لیے راولپنڈی پہنچ گئے ہیں۔کیپٹن (ر) صفدر نے آڈیو بیان جاری کرتے ہوئے آج باضابطہ گرفتاری دینے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ مانسہرہ شہر کے درمیان سے گرفتاری دینے کا سوچا تھا، لیکن پارٹی فیصلے کے نتیجے میں کسی اور شہر سے آج گرفتاری دے دوں گا، گرفتاری دینا غیرت کا تقاضا ہے اور اس حوالے سے پارٹی فیصلے کا احترام کروں گا۔مجرم کی گرفتاری کیلئے نیب راولپنڈی بیورو اور خیبرپختونخوا بیورو کی ٹیمیں پہلے سے ایبٹ آباد اور مانسہرہ میں موجود ہیں۔ ہری پور میں بھی کیپٹن صفدر کے گھر کی نگرانی کی جارہی ہے۔احتساب عدالت نے ایون فیلڈ ریفرنس میں نواز شریف کو 10 سال، مریم نواز کو 7 اور کیپٹن (ر) صفدر کو ایک سال قید کی سزا سنائی ہے۔ کیپٹن (ر) صفدر عدالتی فیصلے کے بعد روپوش ہوگئے تھے، جبکہ نواز شریف اور مریم نواز بیرون ملک ہونے کی وجہ سے نیب کی گرفت میں نہیں آسکے۔ واضح رہے کہ کیپٹن صفدر کو اس سے پہلے 9 اکتوبر 2017 کو بھی نیب مقدمے میں احتساب عدالت میں پیش نہ ہونے پر گرفتار کیا جاچکا ہے۔ وہ لندن سے اسلام ا?باد پہنچے تھے جہاں ائرپورٹ پر ہی نیب نے انہیں حراست میں لے کر اگلے روز عدالت میں پیش کیا۔

جواب چھوڑیں