پرگتی بھون تک ریالی نکالنے یوتھ کانگریس کی کوشش ناکام

تلنگانہ یوتھ کانگریس کی جانب سے گاندھی بھون تا پرگتی بھون نکالی جانے والی احتجاجی ریالی کو پولیس نے آج 3بجے سہ پہر اس وقت روک دیا جبکہ یوتھ کانگریس قائدین‘ سونیا گاندھی کے خلاف ریاستی وزیر کے ٹی راما رائو کے غیر پالیمانی ریمارکس پر چیف منسٹر کیمپ آفس پہنچ کر دھرنا منظم کرنا چاہتے تھے۔ پولیس نے کانگریس رکن اسمبلی وینکٹ ریڈی آل انڈیا یوتھ کانگریس صدر کیشو چند یادو‘ تلنگانہ یوتھ کانگریس صدر انیل کمار یادو‘ پی سرینواس کے بشمول تقریباً 200یوتھ کارکنوں کو گرفتار کرکے شہر کے مختلف پولیس اسٹیشنوں میں منتقل کیا۔ احتجاجی کارکن‘ چیف منسٹر کے سی آر اور ان کے فرزند کے ٹی آر کے خلاف نعرے بلند کر رہے تھے۔ احتجاجی ریالی نکالنے کی کوشش کی وجہ سے گاندھی بھون کے روبرو معظم جاہی مارکٹ اور نامپلی تک ٹریفک جام دیکھی گئی۔ قبل ازیں گاندھی بھون میں بھارت بچائو اندولن جلسہ کو مخاطب کرتے ہوئے کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی نے کہا کہ سونیا گاندھی نے تلنگانہ دیا ہم ان کے مقروض ہیں اس قرض کو چکانے کی ضرورت ہے۔ ٹی آر ایس قائدین کو جان لینا چاہیئے کہ کے سی آر کو نہیں بلکہ تلنگانہ عوام کے جذبات کو دیکھتے ہوئے علیحدہ تلنگانہ کے خواب کو شرمندہ تعبیر کیا گیا۔ کے ٹی راما رائو پر تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وہ دولت اور اقتدار کے بل بوتے پر سونیا گاندھی کے خلاف غیر پارلیمانی الفاظ استعمال کر رہے ہیں۔ انہوں نے کانگریس قیادت کو مشورہ دیا کہ نوجوانوں کو اہمیت دیتے ہوئے آئندہ انتخابات میں نوجوانوں کو زیادہ سے زیادہ اسمبلی کے ٹکٹ دیں۔ انہوں نے انتباہ دیا کہ دوسری پارٹیوں سے کانگریس میں شامل ہونے والے قائدین کو اگر ٹکٹس دئیے جاتے ہیں تو قیادت کو امکانی شکست کا سامنا کرنے تیار رہنا چاہیئے۔قائد اپوزیشن تلنگانہ قانون ساز کونسل محمد علی شبیر نے مرکز میں برسر اقتدار این ڈی اے حکومت پر عوام کی زندگیوں کو اجیرن بنانے کا الزام عائد کیا اور کہا کہ نریندرمودی انتخابی وعدوں کو پورا کرنے میں ناکام ہوگئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نوٹ بندی‘ جی ایس ٹی جیسے مخالف عوام اقدام کرتے ہوئے معیشت کو نقصان پہنچایا اور عوام کو پریشانیوں میں مبتلا کردیا۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم‘ بیرونی ممالک کا دورہ کرتے ہوئے کروڑ ہا روپیہ خرچ کر رہے ہیں لیکن ان کے دوروںسے ایک روپئے کا بھی ملک کو فائدہ نہیں ہوا۔ ریاست میں آمرانہ حکمرانی پر تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ماضی میں صدر کل ہند کانگریس سونیا گاندھی نے تلنگانہ عوام کے جذبات کا احترام کرتے ہوئے تشکیل تلنگانہ کا فیصلہ کیا تھا۔ تاہم کے سی آر خاندان نے تشکیل تلنگانہ کا سہرا اپنے سر لے لیا۔ انہوں نے کہا کہ ریاست میں ہر طبقہ‘ کے سی آر سے نالاں ہے بالخصوص طلباء میں شدید ناراضگی پائی جاتی ہے۔ انہوں نے چندرشیکھر رائو کو چیالنج کیا کہ ان میں ہمت ہے تو وہ تحریک تلنگانہ کی محور عثمانیہ یونیورسٹی میں قدم رکھ کر دکھائیں۔ محمد علی شبیر نے کانگریس میں نئی قیادت کو ابھارنے کی ضرورت ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ نوجوان قیادت کے ذریعہ ہی حصول اقتدار ممکن ہے۔ انہوں نے نوجوان قائدین کو مشورہ دیا کہ وہ دوسرے قائدین کے پیچھے گھومنے کے بجائے اسمبلی حلقوں میں اپنی شناخت بنائیں۔ انچارج کانگریس امور آر سی کنتیانے بھی مخاطب کیا۔ آل انڈیا صدر کیشو چندیادو نے اپنی تقریر میں نریندرمودی حکومت کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ مودی نے ہر سال 2کروڑ ملازمتیں فراہم کرنے کا وعدہ کیا تھا۔ 4سال گذرنے کے بعد بھی یہ وعدہ پورا نہیں کیا۔ قبل ازیں آج صبح آل انڈیا یوتھ کانگریس صدر کیشو چند یادو ایرپورٹ شمس آباد پہنچے۔ ریاستی یوتھ کانگریس کی جانب سے ان کا شاندار خیر مقدم کیا گیا۔ جلسہ میں اقلیتی قائدین شیخ عبداللہ سہیل صدرجی ایم سی سی مائناریٹی سل ‘فیروز خان(نامپلی انچارج) واجد حسین سابق کارپوریٹر‘ محمد امتیاز‘ سید صادق علی ودیگر قائدین موجود تھے۔

جواب چھوڑیں