سرپور پیپر ملس کے احیا ء کے امکانات روشن

ریاستی حکومت کی جانب سے سرپور کاغذ نگر پیپر ملس کے احیاء کی کوشش کامیاب ہوتی نظر آرہی ہے۔ ریاستی حکومت کی جانب سے سرپور پیپر ملس کے احیاء کی تجویز کو نیشنل کمپنی لاء ٹریبونل کی جانب سے منظوری دی گئی ہے۔ حکومت تلنگانہ کی جانب سے سرپور پیپر ملس کے احیاء کے لئے جے کے پیپر لمیٹڈ کو چند مراعات دینے کا فیصلہ کیا گیا تھا جس کے بعد ضلع کمرم بھیم آصف آباد میں بند اس مل کے احیاء کے امکانات روشن ہوگئے۔ سرپور پیپر ملس کے احیاء کے روش امکانات پر ریاستی وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی کے ٹی راما راؤ نے مسرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس پیش رفت سے صاف ظاہر ہے کہ حکومت کی کوشش ثمرآور ثابت ہورہی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت کی جانب سے گذشتہ تین برسوں سے سرپور پیپر ملس کے احیاء کی کوشش کی جاتی رہی ہے۔ ریاست کے نمائندے‘ حیدرآباد ‘ ممبئی‘ کولکتہ و دیگر شہروں کا دورہ کرتے ہوئے پیپر کمپنیوں سے سرپور پیپر ملس کے احیاء کے لئے بات چیت کی تھی۔ رکن اسمبلی سرپور کونیرو کونپا نے صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ اس ضمن میں تازہ ترین پیش رفت سے کاغذ نگر کے عوام کی امیدوں کو نئی زندگی ملی ہے۔ اس کمپنی کے بند ہوجانے سے ٹاؤن کے عوام کی معاشی صورتحال پر خراب اثر پڑا تھا۔ انہوں نے چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ اور کے ٹی راما راؤ کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ پیپر ملس کے احیاء سے 1200 افراد کو راست اور 4000 سے زیادہ افراد کو بالواسطہ روزگار حاصل ہوگا۔

جواب چھوڑیں