اسرائیل کے نئے قانون پر سعودی عرب کی تنقید

ریاض۔ 21 جولائی۔(اے ایف پی) سعودی عرب نے متنازعہ اسرائیلی قانون پر تنقید کی ہے جس کی رو سے ملک کو یہودی عوام کی قومی مملکت قراردیتے ہوئے فلسطینیوں سے نسلی تعصب برتا گیا ہے۔ اسرائیلی پارلیمنٹ نے جمعرات کو اس قانون کو منظوری دی۔ اس قانون کی رو سے عربی کو سرکاری زبان سے ہٹاکر خصوصی درجہ کی زبان قراردیا گیا۔ مملکت سعودی عرب نے اس قانون کو مسترد اور نامنظور کیا ہے۔ اور کہا ہے کہ یہ بین الاقوانی قانون سے میل نہیں کھاتا۔ سعودی پریس ایجنسی(ایس پی اے) کی اطلاع کے بموجب مملکت سعودی عرب نے بین الاقوامی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ ایسے قانون کی روک تھام کرے کیونکہ اس کا مقصد فلسطینی عوام سے نسلی امتیاز برتنا ہے۔ سعودی عرب نے یہ بھی کہا کہ یہ قانون کئی دہے پرانے اسرائیل۔ فلسطین تنازعہ کے خاتمہ میں بھی رکاوٹ ہے۔

جواب چھوڑیں