تاج محل کا تحفظ:حکومت یوپی جمعرات کو ویژن ڈاکومنٹ داخل کرے گی

حکومت اترپردیش سپریم کورٹ میں جمعرات کو آگرہ کے تاج محل کے تعلق سے ایک ویژن ڈاکومنٹ داخل کرے گی۔ ایک عہدیدار نے پیر کے دن یہ بات بتائی۔ سپریم کورٹ نے ماہر ماحولیات ایم سی مہتا کی درخواست کی سماعت کرتے ہوئے حکومت پر سخت تنقید کی تھی جس کے بعد دہلی اسکول آف پلاننگ اینڈ آرکیٹکچر کی تیار کردہ یہ دستاویز آگے بڑھائی جارہی ہے۔ 10 دن قبل سپریم کورٹ نے مرکز اور ریاستی حکومت پر سخت تنقید کی تھی کہ وہ تاریخی عمارت کا تحفظ نہیں کرپارہی ہیں۔ اس نے یوگی آدتیہ ناتھ حکومت سے پوچھا تھا کہ متھرا‘ آگرہ ‘ ہاتھرس‘ ایٹا اور فیروزآباد پر مشتمل 10,400 کیلو میٹر رقبہ والے تاج ٹریپیزیم زون (ٹی ای زیڈ) میں صنعتی سرگرمیوں کو زور پکڑنے کیوں دے رہی ہے۔ یہ زون مغل دور کی تاریخی عمارت کے تحفظ کے لئے وجود میں آیا تھا۔ بنچ نے دونوں حکومتوں پر تنقید کرتے ہوئے یہ بھی کہا تھا کہ دیرپا حل درکار ہے۔ مختصر مدتی اقدامات سے کچھ ہونے والا نہیں۔ 26 جولائی کو پیش ہونے والی ویژن ڈاکومنٹ میں ریاستی حکومت‘ سپریم کورٹ کو یہ بتانا چاہتی ہے کہ 17 ویںصدی کی عمارت کے تحفظ کے لئے کیا کوششیں ہورہی ہیں۔ بیرونی ممالک سے بھی سیاحوں کی بڑی تعداد یادگارِ محبت دیکھنے اترپردیش آتی ہے۔ ریاستی حکومت بتائے گی کہ وہ دریائے یمنا میں 300 کروڑ روپے کی لاگت سے ربڑ چیک ڈیم تعمیر کررہی ہے جس کا سنگ بنیاد یوگی آدتیہ ناتھ اکتوبر 2017 میں رکھ چکے ہیں۔ مشرقی گیٹ پر ایک اورینٹیشن سنٹر قائم ہورہا ہے۔ اس کے علاوہ مہتاب باغ کو بھی آراستہ کیا جارہا ہے۔

جواب چھوڑیں