اربن انفراسٹراکچر کو فروغ دینا حکومت کی ترجیحات میں شامل: کے ٹی آر

حکومت تلنگانہ ، اربن انفراسٹرکچر کو فروغ دینے پر توجہ مرکوز کئے ہوئے ہے اور آئندہ تین برسوں کے دوران ریاست میں شہریا نے کے عمل پر55ہزار کروڑ روپے کی خطیر رقم خرچ کرے گی ۔ سال2023 تک ریاست کے شہروں کی آبادی توقع ہے کہ دیہی آبادی سے زیادہ ہوجائے گی ۔ اور آئندہ 5برسوں کے دوران یہ آبادی ( شہری) ریاست کی نصف آبادی ہوگی ۔ محکمہ بلدی نظم ونسق وشہری ترقیات کی2017-18 کی پہلی سالانہ اور2018-19 کی عمل آوری رپورٹ جاری کرنے کے بعد ریاستی وزیر بلدی نظم ونسق وشہری ترقیات کے تارک رامار اؤ نے آج ایک پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے یہ بات کہی ۔ کے ٹی آر نے اپنی تقریر میں کہا کہ گذربسر اور بہتر زندگی کیلئے بڑے پیمانے پر عوام، شہروں کی طرف نقل مقام کررہے ہیں۔ دیہی عوام کی شہری علاقوں کی جانب منتقلی میں اضافہ دیکھا جارہا ہے ۔ تلنگانہ کے شہری آبادی، ریاست کی جملہ آبادی کا40فیصد ہے جبکہ قومی سطح پر شہری علاقوں کی آبادی، ملک کی جملہ آبادی کا30فیصد ہے ۔ یعنی ملک کی 30 فیصد آبادی شہری علاقوں میں رہتی ہے ۔ انہوںنے کہا کہ شہری علاقوں کی بڑھتی آبادی کو مدنظر رکھتے ہوئے حکومت تلنگانہ، شہری علاقوں میں بنیادی سہولتوں کو فروغ دینے کیلئے ممکنہ اقدامات کرے گی۔ اور بجٹ میں ضروری فنڈس مہیا کرائے گی ۔ جیسا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے وعدہ کیا ہے ۔ چیف منسٹر کے سی آر کے وعدہ کے مطابق حکومت، شہری علاقوں میں انفراسٹرکچر کو فروغ دینے کیلئے بجٹ میں خطیر فنڈس فراہم کرنے کیلئے تیار ہے ۔ انہوںنے کہا کہ واٹر سپلائی، سیفٹی اور سلامتی کے ساتھ ساتھ شہری علاقوں کی ترقی کیلئے عوامی حمل ونقل نظام بھی انتہائی ضروری ہے ۔حکومت ، آلودگی کو کم کرنے ، الیکٹرک گاڑیوں کے چلن کو عام کرنے کے علاوہ دیگر امور کو انجام دینے کیلئے کوشاں ہے۔ انہوں نے کہا کہ تمام شہری ادارہ جات مقامی کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ بعجلت ممکنہ ایکشن (عمل آوری ) منصوبہ کو پیش کریں تاکہ ترقیاتی پراجکٹوں کو سرعت کے ساتھ مکمل کیا جاسکے ۔ کے ٹی آر نے مزید کہا ہے کہ شہری آبادی کی ضروریات کی طلب کو پورا کرنے کیلئے بڑے پیمانے پر انفراسٹراکچر کو فروغ دیا جائے گا ۔ انہوںنے کہا کہ ریاست کی 40تا45فیصد گھریلو پیدا وار، شہر حیدرآباد سے ممکن ہے ۔ دیگر کو ملاکر حکومت، جی ڈی پی کی شرح میں مزید 5تا10 فیصد اضافہ کیلئے کوشاں ہے ۔ این ایس ایس کے بموجب ریاستی وزیر کے ٹی آر نے عہدیداروں کو شہروں اور ٹاونس کو منصوبہ کے مطابق فروغ دینے کی ہدایت دی ہے ۔ عوام کی ضروریات کو مدنظر رکھتے ہوئے انفراسٹراکچر کو فروغ دیا جانا چاہئے ۔ شہریانے کے عمل میں تیزی کو دیکھتے ہوئے چیف منسٹر کے سی آر، شہری علاقوں میں ضروری سہولتوں کی فراہمی کے عہد پر بدستور قائم ہیں۔ ان علاقوں کو مناسب روڈس سے مربوط کرنے ، خطیر رقم مختص کرنے کے بشمول انفراسٹرکچر کو فروغ دینے کیلئے حکومت تیار ہے ۔ انہوںنے محکمہ بلدی نظم ونسق کے 15 ، آئی اے ایس آفیسروں پر زور دیا کہ وہ ٹاونوں میں بڑھتی آبادی کے پیش نظر ضرورت کے مطابق سہولتیں فراہم کرنے کیلئے ممکنہ اقدامت کریں ۔ اس پروگرام میں پرنسپل سکریٹری بلدی نظم ونسق وشہری ترقیات ارویند کمار، مئیر بی رام موہن کمشنر جی ایچ ایم سی، بی جناردھن ریڈی، ریاست کے مختلف مونسپل کارپوریشنوں کے مئیر، صدورنشین بلدیہ ، کمشنران بلدیہ اور دیگر شریک تھے ۔

جواب چھوڑیں