افغانستان میں کشیدگی کا کسی ملک کو فائدہ نہیں ہوگا: ڈاکٹر عبداللہ عبداللہ

افغانستان کے چیف ایگزیکٹو، ڈاکٹر عبداللہ عبداللہ نے کہا ہے کہ جاری چار فریقی امریکہ، افغان، سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات بات چیت کا مقصد افغان امن عمل میں مدد دینا ہے۔اْنھوں نے کہا کہ ’’ہمیں امید ہے کہ مشرق وسطیٰ کی کشیدگی اور دیگر نوعیت کا عالمی تناؤ افغان صوت حال پر کسی طور منفی اثر نہیں ڈالے گا‘‘۔عبداللہ عبداللہ نے یہ بات کل افغان سروس کو دیئے گئے انٹرویو میں کہی ہے۔اس ضمن میں اْنھوں نے اسلامی ملکوں کی تنظیم (او آئی سی) کے سعودی عرب میں منعقدہ اجلاس کا بھی ذکر کیا اور کہا کہ ’’افغانستان اپنے تمام اتحادیوں سے یہ امید رکھتا ہے کہ وہ اْس ہمسایہ ملک پر زور دیں گے جو طالبان کا حامی ہے‘‘۔ تاہم، اْنھوں نے کہا کہ ’’ابھی تک امن کے حصول کے معاملے میں پیش رفت سامنے نہیں آئی‘‘۔ ساتھ ہی، اْن کا کہنا تھا کہ ’’امن کوششیں جاری رکھی جانی چاہئیں‘‘۔طالبان کے ساتھ کسی سمجھوتے پر پہنچنے کے بارے میں ایک سوال پر، اْنھوں نے کہا کہ ’’جنوبی ایشیا سے متعلق نئی امریکی پالیسی میں طالبان اور دہشت گرد گروپوں کے ایک ہمسایہ ملک میں موجود محفوظ ٹھکانوں کو ہدف بنایا جانا شامل ہے۔‘‘۔اْنھوں نے کہا کہ ’’کسی امن عمل میں امریکہ نے ہمیشہ افغان مفادات کا دفاع کیا ہے‘‘۔ایک اور سوال پر اْنھوں نے کہا کہ ’’کچھ ملکوں کا طالبان پر اثر و رسوخ ہے اور اْن سے رابطہ ہے‘‘؛ اور اِس توقع کا اظہار کیا کہ ’’ایسے ملک اس موقع کا فائدہ اٹھاتے ہوئے امن و استحکام کے لیے کام کریں گے‘‘۔اْنھوں نے کہا کہ ’’افغانستان میں کشیدگی جاری رہنے کا کسی ملک کو فائدہ نہیں ہوگا‘‘۔

جواب چھوڑیں