بایاں بازو کے 25 سالہ دورِاقتدار میں ہجوم کے تشدد کا ایک بھی واقعہ نہیں: مانک سرکار

سابق چیف منسٹرتریپورہ مانک سرکار نے دعویٰ کیا ہے کہ ریاست میں بائیں بازو کے 25 سالہ دوراقتدار میں ہجوم کے تشدد کا ایک بھی واقعہ پیش نہیں آیا۔ انہوں نے کہا کہ ایسے واقعات اسی وقت پیش آتے ہیں جب حکومت اپنے وعدے وفاکرنے میں ناکام ہوجاتی ہے اور عوام کی توجہ اس کی طرف اٹھنے والی انگلیوں سے ہٹاناچاہتی ہے۔بایاں بازو قائد نے جو حال میں نئی دہلی آئے ہوئے تھے الزام عائد کیاکہ بی جے پی 2014ء کے الیکشن سے قبل کئے گئے وعدہ وفاکرنے میں ناکام رہی۔ وہ اب سماج کو ذات پات، نسل اور طبقات کی بنیاد پر بانٹنے کی کوشش کررہی ہے۔ انہوں نے تریپورہ میں ہجوم کے تشدد میں چار افراد کی ہلاکت کے حوالے سے یہ بات کہی۔ سابق ریاستی چیف منسٹر نے دعویٰ کیاکہ بایاں بازو کے 25سالہ دوراقتدار میں ایسے واقعات کبھی پیش نہیں آئے۔ ان کے بموجب ایسے واقعات اسی وقت پیش آتے ہیں جب حکومت الیکشن کے دوران کئے گئے وعدے وفا نہیں کرسکتی اور وہ اپنی طرف اٹھنے والی انگلیوں سے عوام کی توجہ ہٹاناچاہتی ہے۔ سرکار نے الزام عائد کیاکہ بچہ چوری، ہجوم کا تشدد اور گئورکھشا مرکز کی ناکامیوں سے عوام کی توجہ ہٹانے بی جے پی کے ناپاک منصوبے کا حصہ ہیں۔ اقلیتیں اور دلت اس خوف کی نفسیات کا بدترین نشانہ بنے ہیں۔ حکومت بی جے پی کی مخالفت کرنے والی آوازیں دباناچاہتی ہیں۔

جواب چھوڑیں