جنوبی کشمیر میں عسکریت پسندوں نے مغویہ ایس پی او کو رہا کردیا

جنوبی کشمیر کے ضلع پلوامہ کے ترال میں جموں وکشمیر پولیس کے مغویہ اسپیشل پولیس آفیسر (ایس پی او) کو عسکریت پسندوں نے رہا کردیا ہے۔ عسکریت پسندوں کا کہنا ہے کہ ایس پی او کو اس لئے رہا کیا گیا کیونکہ وہ اپنے گھر میں تین بہنوں کا اکلوتا بھائی ہے۔ تاہم عسکریت پسندشوں نے دھمکی دی ہے کہ اگر محکمہ پولیس میں کام کررہے ایس پی اوز جمعہ تک نوکری چھوڑ کر اپنے گھروں کو واپس نہیں آگئے تو ان کا انجام ٹھیک نہیں ہوگا۔ سرکاری ذرائع نے بتایا ’تین عسکریت پسندوں پر مشتمل ایک گروپ نے گذشتہ رات مدثر احمد لون نامی ایس پی او کو چھان کتار ترال میں واقع اس کے گھر سے بندوق کی نوک پر اغواء کیا‘۔ انہوں نے بتایا ’مدثر لون ریشی پورہ اونتی پورہ میں واقع پولیس پوسٹ میں تعینات ہے جہاں وہ باورچی کی حیثیت سے کام کررہا ہے۔ اغوا کاروں نے اسے ہفتہ کی شام رہا کیا اور وہ اپنے گھر پہنچ چکا ہے‘۔ ایس پی او مدثر لون کے اغوا کے چند گھنٹے بعد اس کی ماں نے عسکریت پسندوں سے اسے رہا کرنے کی درمندانہ اپیل کی تھی۔انہوں نے مدثر کو اغوا کرنے والے عسکریت پسندوں کو مخاطب ہوکر کہا تھا ’میرا بیٹا تین بہنوں کا اکلوتا بھائی ہے۔ میں اس کی طرف سے معافی مانگتی ہوں۔ اگر اس سے کوئی خطا سرزد ہوئی ہے تو میں ہاتھ جوڑ کر معافی مانگتی ہوں۔ اگر میرے بیٹے سے کوئی غلطی سرزد ہوئی ہے تو اللہ کے واسطے اسے معاف کرو۔ اس سے آئندہ کوئی غلطی سرزد نہیں ہوگی۔ آپ (عسکریت پسند) میرے بھی بچے ہو، اور اس کے بھائی ہو۔ اگر آئندہ کوئی غلطی سامنے آئی تو آپ ہم سب کو مار سکتے ہیں۔ میری لڑکیاں شادی کی عمر کو پہنچ چکی ہیں‘۔ دریں اثنا عسکریت پسندوں نے ایک ویڈیو جاری کرکے دھمکی دی ہے کہ اگر محکمہ پولیس میں کام کررہے ایس پی اوز جمعہ تک نوکری چھوڑ کر اپنے گھروں کو واپس نہیں آگئے تو ان کا انجام ٹھیک نہیں ہوگا۔ عسکریت پسندوں کو مذکورہ ویڈیو جس میں ایس پی او مدثر لون کو ان کے قبضے میں دیکھا جاسکتا ہے، میں یہ کہتے ہوئے سنا جاسکتا ہے ’ہم نے آپ (مدثر) کو مارنے کے لئے اغوا کیا تھا۔ جو ایس پی او جمعہ تک واپس نہیں آئے گا، اس کو ہلاک کیا جائے گا۔ ہم نے آپ کو اس لئے معافی دی کیونکہ آپ کے گھر میں تین بہنیں ہیں۔ تم تین بہنوں کے اکلوتے بھائی ہو۔ ہم نے اسی وجہ سے آپ کو رہا کیا ہے‘۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *