دورہ انگلینڈ میں کوہلی کی قیادت کا امتحان ہوگا:گنگولی

ہندوستانی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان سورو گنگولی نے کہاکہ دورہ انگلینڈ کے دوران ویراٹ کوہلی کی بیٹنگ نہیں بلکہ ان کی قیادت کا امتحان ہے جو لوگ صرف ان سے اچھی بیٹنگ کی توقع لگائے ہوئے ہیں وہ غلطی پر ہیں۔ انہوں نے کہاکہ وقت یہ فیصلہ کرے گا کہ کوہلی نے ٹیم کو کہاں چھوڑا، صرف دورہ انگلینڈ میں ان کی بیٹنگ کو ہی سب کچھ نہ سمجھ لیاجائے۔ اگر وہ اچھا اسکور کرنے میں کامیاب رہے تو بہت عمدہ بات ہوگی لیکن کپتان کے طورپر ان کا اصل امتحان ٹیم کو آخری گیند تک لڑانا اور کامیابی حاصل کرناہے۔ گنگولی نے کہاکہ اصل بات یہ ہے کہ ان کے دور میں ٹیم نے کن بلندیوں کو چھوا، رنز تو کرتے رہیں گے لیکن کپتان کو ہر شعبے میں آگے رہنا ہوتاہے۔ ٹیم کے دیگر کھلاڑیوں کے بارے میں گنگولی نے کہاکہ ویراٹ کوہلی کے بارے میں سب ہی بخوبی جانتے ہیں اور جس پائے کے کھلاڑی ہیں اس سے بھی دنیا واقف ہے۔ مجھے ذاتی طورپر لوکیش راہول کی بیٹنگ زیادہ پسند ہے، لوکیش بہت اچھا بیٹسمین ہے اور ایسا کھلاڑی ہے جو ہر جگہ اور ہر فارمیٹ میں رنز بناسکتاہے۔ اسی طرح کلدیپ یادو بھی ایسا بولر ہے جو ٹیم کو بیرون ملک ٹسٹ میاچس میں کامیابی دلانے کی اہلیت رکھتا ہے۔ اسی طرح میری خواہش ہے کہ اجنکیا رہانے بھی اچھی کارکردگی دکھائے کیونکہ وہ بھی بڑا کرکٹر بننے کی صلاحیت رکھتاہے۔ یہ کوہلی کی قیادت کا بھی امتحان ہے کہ وہ رہانے جیسے کرکٹر کی صلاحیتوں کو جانچے اور اسے موقع دے تاکہ وہ ٹیم میں جگہ پکی کرسکے۔ کوہلی اپنے کھلاڑیوں کی حمایت اور سرپرستی کرتے ہیں اور یہی خوبی مہندر سنگھ دھونی میں بھی تھی اور میں کہہ سکتا ہوں کہ یہ سلسلہ میری کپتانی کے دور میں شروع ہوا تھاکہ اچھے اور با صلاحیت کرکٹر کو کپتان کی تائید و حمایت چاہئے ہوتی ہے تاکہ مشکل وقت میں اسے سہارا دیا جاسکے۔ سابق کپتان نے بیرون ملک ٹیم کی کارکردگی کے بارے میں کہاکہ 2009 کے بعد سے صورتحال خراب چلی آرہی ہے اور ہم تسلسل سے اچھے کھیل کا مظاہرہ نہیں کررہے ہیں۔ ہمیں اچھے فاسٹ بولر کی ضرورت ہے جو تیز وکٹوں پر ہمارے کام آسکیں اور ٹیم کو کامیابی دلانے میں مدد گار ہوں کیونکہ ہر جگہ اسپنرز ٹیم کا سہارا نہیں بن سکتے۔

جواب چھوڑیں