مولانا ارشد مدنی آئندہ مدت کےلئے پھرصدرمنتخب

 ملک کے موجودہ حالات کے پیش نظرکل مرکزی دفترجمعیۃ علماء ہند کے مفتی کفایت اللہ میٹنگ ہال بہادرشاہ ظفرمارگ میں جمعیۃعلماء ہند کی مجلس عاملہ کا ایک اہم اجلاس منعقد ہوا، جس میں ملک کے موجودہ حالات اور قانون وانتظام کی بدتر صورت حال پر گہری تشویش کا اظہار کیاگیا ساتھ ہی دوسرے اہم ملی اور سماجی ایشوز پر تفصیل سے غوروخوض ہوا، اجلاس میں آئندہ مدت کے لئے مولانا سید ارشدمدنی کی صدارت کا اعلان کیا گیا۔مولانا ارشد مدنی نے تمام اہم ایشوزپراپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ملک کے موجودہ حالات خاص طورپرمسلم اقلیت اوردلتوں کیلئے تقسیم کے وقت سے بھی بدتراور خطرناک ہوچکے ہیں، ایک طرف جہاں آئین اور قوانین کی بالادستی کو ختم کرنے کی سازش کی جارہی ہے وہیں عدل وانصاف کی روشن روایت کوبھی ختم کردینے کی خطرناک روش اخیتارکی جارہی ہے ۔مولانامدنی نے انتباہ دینے ہوئے کہا کہ ہندوستان میں کسی ایک نظریہ اور مذہب کی بالادستی چلنے والی نہیں ہے یہ ملک سب کا ہے ہندوستان ہمیشہ سے گنگاجمنی تہذیب کا علمبردار ہے اور اسی راہ پر چل کر ہی ملک کی ترقی ممکن ہے ۔ موب لنچنگ کے حالیہ واقعات پر اپنی سخت برہمی اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے صدرجمعیۃعلماء ہند مولانا سید ارشدمدنی نے کہا کہ یہ قتل نہیں حیوانیت اور درندگی کی انتہاہے کہ ہجوم کی شکل میں اکٹھا ہوکر کسی بے گناہ اور نہتے شخص کو پیٹ پیٹ کر موت کے گھاٹ اتاردیا جائے۔

جواب چھوڑیں