مین نے یوٹرن نہیں رائٹ ٹرن لیا : نائیڈو

آندھرا پردیش کے چیف منسٹر این چندرا بابو نائیڈو نے ریاست کو خصوصی موقف نہ دینے پر مرکز کی بی جے پی کی زیر قیادت این ڈی اے حکومت کو ایک بار پھر تنقید کا نشانہ بنایا اور انہوں نے وزیر اعظم نریندر مودی کے اُس بیان کو مستر د کردیا جس میں مودی نے نائیڈو پر خصوصی موقف کے مسئلہ پر یوٹرن لینے کا الزام عائد کیا تھا ۔ وزیر اعظم کے بیان کو خارج کرتے ہوئے نائیڈو نے کہا کہ وہ ، اس مسئلہ پر صحیح موقف اپنایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ خصوصی موقف کے مسئلہ پر یوٹرن لیا ہے اور نہ ہی وائی ایس آر کانگریس پارٹی کے جھانسہ کا شکار ہوئے ہیں۔ بی جے پی نے اس مسئلہ پر اپنا موقف تبدیل ( یو ٹرن) کیا ہے۔ انتخابات سے قبل بی جے پی نے 10 سال تک آندھرا پردیش کو خصوص موقف دینے کا وعدہ کرتے ہوئے اس وعدہ سے انحراف کیا ہے ۔ اونگول میں کل ایک عوامی جلسہ سے خطاب کرتے ہوے نائیڈو نے یہ بات کہی ۔ یہ جلسہ ، حکمراں جماعت کے احتجاجی پروگرام کا ایک حصہ تھا ۔ ریاست کو خصوصی موقف نہ دئیے جانے پر بطور احتجاج حکمراں جماعت نے ہر ضلع میں عوامی جلسہ منعقد کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ اونگول کا جلسہ بھی اسی سلسلہ کی ایک کڑی ہے ۔ نائیڈو نے مودی حکومت کے خلاف پیش کردہ تحریک عدم اعتماد کی غیر مشروط تائید کرنے پر اپوزیشن جماعتوں سے اظہار تشکر کیا۔ انہوںنے کہا کہ آندھرا پردیش سے انصاف کرنے کا تمام سیاسی جماعتوں نے مطالبہ کیا ہے ۔ چیف منسٹر نے کہا کہ ریاست کو انصاف ملنے تک حکمراں جماعت تلگودیشم پارٹی کی جدوجہد جاری رہے گی ۔ ریاست کی تیز رفتار ترقی کیلئے اے پی کو خصوصی موقف دیا جانا ضروری ہے ۔ انہوںنے الزام عائد کیا کہ بی جے پی، ریاست کی اپوزیشن جماعتوں سے مل کر تلگودیشم حکومت کے خلاف سازشیں کررہی ہے ۔ تلگودیشم کا یہ مطالبہ رہے گا کہ مرکز، اے پی کو خصوصی موقف عطا ء کرے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *