ہم نے پی ڈی پی کو پھینک دیا‘ محبوبہ مفتی اقتدار سے چمٹے رہنا چاہتی تھیں:بی جے پی

بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) نے اپنی سابق اتحادی جماعت پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی (پی ڈی پی) کی صدر محبوبہ مفتی کے بیان کہ ’بی جے پی سے اتحاد ‘ زہر کا گھونٹ پینے کے برابر تھا‘ پر اپنے فوری ردعمل میں کہا ہے کہ محبوبہ مفتی اتحاد کو جاری رکھنے کے حق میں تھیں اور بحیثیت چیف منسٹر بہت خوش تھیں۔بی جے پی کے مطابق پی ڈی پی اب اپنی کھوئی ہوئی ساکھ کو بحال کرنے کے لئے گمراہ کن بیان بازی سے کام لے رہی ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ پی ڈی پی نے ہمیں نہیں بلکہ ہم نے پی ڈی پی کو پھینک دیا ہے۔بی جے پی کے ریاستی ترجمان اعلیٰ ایڈوکیٹ سنیل سیٹھی نے اتوار کے روز یہاں ترکوٹہ نگر میں واقع پارٹی دفتر پر ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ’محبوبہ مفتی صاحبہ کا یہ بیان دینا کہ بھارتیہ جنتا پارٹی کے ساتھ ان کا اتحاد‘ زہر کا گھونٹ پینے کے برابر تھا، اس پر بی جے پی مفتی سے پوچھنا چاہتی ہے کہ آپ کی بی جے پی سے اتحاد کرنے کی کیا مجبوری تھی؟ زہر کے گھونٹ جو پی رہا تھا، اس نے پیالی اپنے منہ سے پھینک دی۔ بی جے پی نے مخلوط حکومت ختم کی ہے۔پی ڈی پی تو اتحاد ختم کرنے کے لئے تیار ہی نہیں تھی۔ پی ڈی پی اس کے حق میں تھی کہ یہ حکومت چلتی رہے‘۔ انہوں نے کہا ’ہمیں لگا کہ اگر یہ حکومت جاری رہی تو قومی مفادات پر آنچ آئے گی۔ ہم نے اس کو پھینک دیا۔ آپ (محبوبہ مفتی) تو خوش تھیں‘۔بی جے پی ترجمان نے کہا کہ پی ڈی پی اب اپنی کھوئی ہوئی ساکھ کو بحال کرنے کے لئے مسلم برادری کے جذبات کے ساتھ کھیلنے لگی ہے۔ انہوں نے کہا ’پی ڈی پی کے کل کے جلسہ سے دو خطرناک بیانات سامنے آئے ہیں۔ ایک محترمہ مفتی نے بیان دیا کہ ہندوستان کو پاکستان کے متوقع وزیر اعظم عمران کی پیشکش قبول کرنی چاہیے۔ دوسرا بیان پی ڈی پی کے بانی رکن مظفر حسین بیگ کی طرف سے سامنے آیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اگر گائے کے نام پر ہجومی تشدد کا سلسلہ نہیں رکا تو ملک کے مزید دو ٹکڑے ہوں گے‘۔ انہوں نے کہا ’پی ڈی پی اقتدار کھونے کے بعد فرقہ وارانہ اور ملک مخالف بیانات دینے لگی ہیں۔ اس جماعت کا ماننا ہے کہ فرقہ وارانہ اور ملک دشمن بیانات دیکر یہ جماعت مسلم برادری کے جذبات کے ساتھ کھیلے گی۔ اور مسلم برادری ان بیانات کو سنجیدگی سے لیکر پی ڈی پی کو سپورٹ کرے گی۔ پی ڈی پی گذشتہ تین برسوں کے دوران لوگوں کا سپورٹ کھو چکی ہے‘۔

جواب چھوڑیں