این آر سی معاملے پراپوزیشن کی ہنگامہ آرائی ۔راجیہ سبھا کی کارروائی دن بھر کیلئے ملتوی

آسام میں قومی شہری رجسٹر (این آرسی) کے قطعی مسودے میں تقریباً 40 لاکھ لوگوں کے نام نہ ہونے کے معاملے پر آج راجیہ سبھا کی کارروائی تین بار ملتوی ہونے کے بعد دن بھر کے لئے ملتوی کر دی گئی۔لنچ کے وقفہ کے بعد چیئرمین ایم وینکیا نائیڈو نے جیسے ہی ایوان کی کارروائی شروع کرنے کی کوشش کی تو ترنمول کانگریس کے ڈیریک اوبرائن اپنی سیٹ پر کھڑے ہو گئے اور زور زور سے بولنے لگے۔ اس دوران قائد اپوزیشن غلام نبی آزاد اور کانگریس کے دیگر ارکان بولنے لگے۔سماج وادی پارٹی، کمیونسٹ پارٹی اور مارکسی کمیونسٹ پارٹی، راشٹریہ جنتا دل، تلگو دیشم پارٹی کے رکن اپنی نشستوں سے کھڑے ہوگئے۔اس پر چیرمین نے کہا کہ نے کہا کہ یہ طریقہ نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسی صورت میں ایوان کی کارروائی ملتوی کردی جائے گی۔ اس سے پہلے کہ رکن کچھ بول پاتے نائیڈو نے ایوان کی کارروائی 10 منٹ کے لئے 2.11 بجے تک ملتوی کر دی۔اس کے بعد کارروائی دوبارہ شروع ہونے پراو برائن نے کہا کہ یہ سیاست کا مسئلہ نہیں ہے۔ یہ اپنے ملک کے لوگوں کا مسئلہ ہے۔ یہ انسانیت اور قومیت سے متعلق مسئلہ ہے۔ اس پر فوری طور پر بات چیت کرنی چاہئے۔ اس دوران کانگریس، سماجوادی پارٹی، سی پی ایم اور سی پی آئی کے رکن کھڑے ہوکر بولنے لگے۔چیئرمین نے کہا کہ اس معاملے پر مرکزی وزیر داخلہ ایوان میں بیان دیں گے لیکن وہ اب تک نہیں پہنچ پا ئے ہیں۔ کل صبح سب سے پہلے یہی ہوگا۔ انہوں نے اراکین سے خاموش ہونے اور ایوان چلنے دینے کی اپیل کی لیکن اس کا کوئی اثر نہ ہوتے دیکھ کر نائیڈو نے ایوان کی کارروائی چوتھی بار دن بھر کے لئے ملتوی کردی۔ اس سے پہلے ایوان کی کارروائی 12 بجے تک کے لئے اور دو بجے تک کے لئے ملتوی کردی گئی تھی۔قبل ازیں موصولہ اطلاع کے بموجب آسام میں قومی شہریت رجسٹر (این آرسی) کے آخری مسودے میں تقریباً 40 لاکھ لوگوں کے نام نہ ہونے کے معاملہ پر وقفہ صفر کے دوران ملتوی راجیہ سبھا کی کارروائی پھر سے دو بجے تک ملتوی کر دی گئی۔التوا کے بعد جیسے ہی سوال کے لئے ایوان کی کارروائی شروع ہوئی اور چیئرمین ایم وینکیا نائیڈو چیئر پر بیٹھے تو ترنمول کانگریس اور دیگر پارٹیوں کے ارکان نے کچھ کہنا چاہا لیکن وہ ’سر سر …‘ ہی کہہ پائے تھے کہ چیئرمین نے بغیر کچھ بولے اور بغیر کچھ سنے ہی کارروائی دوپہر دو بجے تک ملتوی کر دی جس کے سبب وقفہ سوالات نہیں ہو سکا۔اس سے پہلے صبح میں کارروائی شروع ہونے پر ترنمول کانگریس کے ارکان نے اس مسئلے کو لے کر ہنگامہ کیا۔ اپوزیشن کی دیگر پارٹیوں کے رکن بھی ان کے ساتھ یہ مسئلہ اٹھا رہے تھے جس سے ایوان میں شور شرابہ بڑھ گیا۔ نائیڈو نے کہا کہ اس معاملہ پر کچھ ارکان نے ان سے رابطہ کیا ہے اور اس پر انہوں نے وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ سے وضاحت طلب کی ہے۔انہوں نے کہا کہ وزیر ابھی ایوان میں ہیں اور وہ اس معاملہ پر وضاحت پیش کریں گے۔

جواب چھوڑیں