کیرانہ میں الکٹرانک ووٹنگ مشین خراب ہونے کی وجہ گرمی نہیں: مملکتی وزیر

الیکشن کمیشن کے اس دعویٰ کے برخلاف کہ جاریہ سال مئی میں منعقدہ کیرانہ لوک سبھا الیکشن میں ای وی ایم اور وی وی پی اے ٹی مشینوں کی خرابی کی وجہ حد سے زائد گرمی تھی۔ حکومت نے پیر کے دن کہا کہ موسم گرما اس کی وجہ نہیں تھی۔ راجیہ سبھا میں ایک تحریری جواب میں مملکتی وزیر قانون و انصاف پی پی چودھری نے کہا کہ نہیں سر ‘ مشینوں کی خرابی کی وجہ شدت کی گرمی نہیں تھی۔ انہوں نے الکٹرانک ووٹنگ مشینوں کا متبادل کوئی اور طریقہ اختیار کرنے کا امکان خارج کیا۔ 2019 کا لوک سبھا الیکشن آئندہ سال اپریل۔ مئی میں منعقد ہونے والا ہے۔ ارکان پارلیمنٹ نیرج شیکھر‘ جاوید علی خان اور روی پرکاش ورما نے پوچھا تھا کہ آیا الیکشن کمیشن آئندہ سال اپریل ۔ مئی میں شدت کی گرمی کے دوران اگلے عام انتخابات کسی اور طریقہ سے منعقد کرنے کی تجویز رکھتا ہے۔ مملکتی وزیر نے اپنے جواب میں کہا کہ ایسا کوئی امکان سرے سے نہیں۔ انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن آف انڈیا کے اعدادوشمار کے مطابق اترپردیش کے کیرانہ لوک سبھا اور نور پور اسمبلی حلقہ میں 28 مئی کو منعقدہ الیکشن میں 2056 ای وی ایم/ وی وی پی اے ٹی استعمال ہوئے تھے۔ 7 ای وی ایم اور 388 وی وی پی اے ٹی یونٹس نے کام نہیں کیا تھا۔ جون میں الیکشن کمیشن کی رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ 355 وی وی پی اے ٹی مشینیں خراب ہوئی تھیں جنہیں بدلنا پڑا۔ نور پور میں 29 پیپر ٹریل مشینوں کو بدلنا پڑا کیونکہ ان میں خرابی پیدا ہوگئی تھی۔ ضمنی الیکشن کے بعد الیکشن کمیشن نے اپنی رپورٹ میں کہا تھا کہ اتنی بڑی تعداد میں وی وی پی اے ٹی مشینیں شدید گرمی ‘ مشینوں کو راست دھوپ میں رکھنے اور ان سے صحیح طریقہ سے ہینڈلنگ نہ کرنے کی وجہ سے خراب ہوئی تھیں۔ پولنگ عملہ نے اسے پہلی مرتبہ استعمال کیا تھا۔

جواب چھوڑیں