ایران پر امریکی پابندیوں کامیاب بنانے کیلئے 20 ممالک پر مشتمل محاذ کا قیام

امریکی انتظامیہ کے عہدیداروں کا کہنا ہے کہ ایران پر عاید کردہ تازہ اقتصادی پابندیوں کو موثر، نتیجہ خیز اور کامیاب بنانے کے لیے 20 ممالک پر مشتمل بین الاقوامی محاذ قائم کیا گیا ہے۔ امریکی عہدیداروں کا کہنا ہے کہ ایران کے خلاف پابندیاں بھروپور طریقے سے نافذ کی جائیں گی۔ذرائع کے مطابق امریکی حکام کاکہنا ہے کہ ایران کے خلاف منظور کردہ نئی پابندیاں پہلے بھی رہ چکی ہیں۔ ایران کے ساتھ جوہری معاہدے طے پانے کے بعد انہیں اٹھا لیا گیا تھا، تاہم حال ہی میں صدر ٹرمپ کی جانب سے ایران کیساتھ طے پائے جوہری معاہدے سے علاحدگی کے بعد سابقہ پابندیاں بہ تدریج بحال کرنے کا اعلان کیا تھا۔امریکی انتظامیہ کے عہدیداروں کا کہنا ہے کہ رواں ہفتے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ ایران پر مزید سخت پابندیاں عاید کرسکتے ہیں اور ان پابندیوں کے ایران کی معیشت پر گہرے منفی اثرات مرتب ہوں گے۔ایرانی حکومت امریکی بینک نوٹ یعنی ڈالر نہ خرید سکتی ہے اور نہ حاصل کر سکتی ہے۔ ایران کی سونے اور قیمتی جواہرات میں تجارت پر پابندیصنعتی پیداوار میں گریفائٹ، المونیم، سٹیل، کوئلہ اور سافٹ ویئر کا استعمال نہیں کر سکتی ہے۔خودمختاری کے ساتھ قرض کی ادائیگی میں ایران کی سرگرمیوں پر پابندی اور ایران کے آٹوموٹو سیکٹر پر پابندی شامل ہیں۔

جواب چھوڑیں