انتخابی وعدے فراموش ۔ ریاست میں3افراد کی حکمرانی:پروفیسر کودنڈا رام

صدر تلنگانہ جنا سمیتی پروفیسر کودنڈا رام نے الزام عائد کیا کہ برسر اقتدار آنے کے بعد چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے انتخابات کے وقت عوام سے کئے گئے وعدوں کو فراموش کردیا ۔ انہوںنے کہا کہ ریاست میں چیف منسٹر کے افراد خاندان فرزند ، لڑکی اور بھانجے کی حکمرانی ہے ۔ ریاست کا نظم ونسق چیف منسٹر کیمپ آفس سے چلایا جارہا ہے۔ انہوںنے کہا کہ موجودہ حکومت کو اقتدار سے بے دخل کرنے کیلئے تلنگانہ جنا سمیتی ( ٹی جے ایس ) قائم کی گئی ہے ۔پروفیسر کودنڈا رام ، آج یہاں میٹ دی پریس پروگرام سے خطاب کررہے تھے، یہ پروگرام تلنگانہ جرنلسٹس یونین کی جانب سے منعقد کیا گیا انہوںنے کہا کہ گذشتہ3ماہ سے بیواؤں ، معمر افراد کو آسرا پنشن کی رقم جاری نہیں کی گئی ہے ۔ جس کے باعث بیواؤں، معمر افراد کو مالی مشکلات کاسامنا ہے ۔ حکومت ہر سال، ایک لاکھ کروڑ سے زائد رقم کا بجٹ پیش کررہی ہے انہوں نے حکومت سے سوال کیا کہ طلبہ کو اسکالرشپ ، فیس بازا ادائیگی کیلئے کیوں تاخیر کی جارہی ہے ۔ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے ایک لاکھ بے روزگار نوجوانوں کو سرکاری ملازمت دینے کا وعدہ کیا تھا مگر اب تک حکومت نے صرف25تا30ہزار مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات کئے ہیں۔ انہوںنے کالیشورم پراجکٹس اور مشن بھاگیرتا کے تعمیری کام میں بڑے پیمانے پر بدعنوانیوں کا الزام عائد کیا اور کہا کہ ٹی آر ایس دور حکومت میں غریبوں کو ڈبل بیڈروم مکانات فراہم کرنے کے صرف زبانی وعدے کئے جارہے ہیں اس سلسلہ میں عملی اقدامات ندارد ہیں ۔ انہوںنے کہا کہ ریاستی حکومت نے تومیڈی ہٹی آبپاشی پراجکٹ کے ڈیزائن میں تبدیلی کی ہے جس سے اس پراجکٹ کا تخمینہ مصارف 15ہزار کروڑ روپے سے بڑھ کر40ہزار کروڑ روپے کیا گیا اگر یہ اضافی25ہزار کروڑ کی رقم آسرا پنشن، طلبہ کو اسکالرشپ اور فیس کی ادائیگی و دیگر ترقیاتی کام پر خرچ کی جاتی تو اس سے غریبوں کا فائدہ ہوتا تھا ۔ انہوںنے چیف منسٹر پر مسلمانوں کے ساتھ دھوکہ دہی کا الزام عائد کیا اور کہا کہ ریاستی اسمبلی میں مسلمانوں کو 12فیصد تحفظات کا بل منظور کرنے کے بعد اس بل کو مرکزی حکومت کے پاس روانہ کر نے سے حکومت کی ذمہ داری ختم نہیں ہوگی۔ جبکہ چیف منسٹر کو اس مسئلہ پر مرکزی حکومت سے کامیاب و موثر نمائندگی کرتے ہوئے مسلمانوں کو حسب وعدہ 12فیصد تحفظات دلانے کیلئے اقدامات کرنا چاہئے ۔ انہوںنے کہا کہ مسلمانوں کی تعلیمی ، معاشی دیگر مسائل کو حل کرنے کیلئے سدھیر کمیٹی نے جورپورٹ دی ہے ، حکومت کو اس رپورٹ پر عمل آوری کرنا چاہئے ۔ پروفیسر کودنڈا رام نے دعویٰ کیا کہ ان کی پارٹی اقتدار پر فائز ہونے کے بعد بے روزگار نوجوانوں کو ماہانہ2500روپے الاونس ، خواتین کو25 پیسے شرح سود پر قرض کی فراہمی اور دیگر اقدامات کرے گی ۔ ان کی حکومت تلنگانہ کے سرکاری محکموں میں مخلوعہ ڈھائی لاکھ جائیدادوں پر تقررات کرے گی انہوںنے کہا کہ میٹرو ریل پراجکٹ کے تعمیری کام کو پرانے شہر میں آغاز کرنے کیلئے ایم ڈی حیدرآباد میٹرو ریل ایس وی ایس ریڈی سے نمائندگی کریں گے ۔ انہوں نے کہا کہ آئندہ 2ماہ کے دوران حکومت کے خلاف احتجاجی پروگرام منظم کرنے کیلئے لائحہ عمل مرتب کیا جائے گا ۔ انہوںنے کہا کہ آئندہ انتخابات میں ان کی پارٹی کسی دوسری سیاسی جماعت سے مفاہمت نہیں کرے گی اور ان کی پارٹی اپنے بل بوتے پر انتخابات میں حصہ لے گی اس موقع پر تلنگانہ جرنلسٹس یونین کے قائدین نرسمہا ، دنیش کے علاوہ اور دیگر موجود تھے ۔

جواب چھوڑیں