نائب صدر جمہوریہ وینکیا نائیڈو کا ایک سال مکمل

نائب صدر جمہوریہ اور راجیہ سبھا کے صدرنشین کی حیثیت سے ایم وینکیا نائیڈو نے ہفتہ کو اپنا ایک سال مکمل کرلیا ہے ۔ انتہائی چالاکی سے بیان دینے اور بہتر مقرر کے طور پر پہچان بنانے والے ایم وینکیا نائیڈو نے 11؍ اگست2017 کو ملک کے15ویں نائب صدرجمہوریہ کے عہدہ کا جائزہ حاصل کیا تھا ۔ سیاست کا طویل تجربہ رکھنے والے نائیڈونے اپنے کیرئیر کا آغاز اسٹوڈنٹ لیڈر کے طور پر کیا تھا۔ اس کے بعد انہوںنے کبھی پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا ۔ ملک کے دوسرے بڑے جلیل القدر عہدہ پر فائز ہونے سے قبل انہوںنے مرکز میں کئی اہم قلمدانوں کی ذمہ داریاں سنبھالی تھیں۔ بحیثیت صدرنشین راجیہ سبھا ایم وینکیا نائیڈو ، بحث، مباحث، فیصلہ، ایوان کی کاروائی میں خلل مت ڈالو اور اپوزیشن ، مخالف، مت کرو جیسے ان کے حوالوں کا ایوان کے ارکان اچھا تاثر لیتے ہیں۔ نائب صدر جمہوریہ کا عہدہ سنبھالنے کے بعد پہلے سال کے دوران انہوںنے ملک کی29 کے منجملہ28 ریاستوں کا دورہ کیا ہے اور وہ مرکز کے زیر انتظام تین علاقوں انڈومان ، نکوبار جزائر، چندی گڈھ اور پاڈو چیری بھی گئے ۔ یہ اعزاز، ان کے پیشرو کسی بھی نائب صدر جمہوریہ کو حاصل نہیں ہوا ۔ طویل انتظار کے بعد بحیثیت نائب صدر نائیڈو کو اس لئے سکم کا دورہ ملتوی کرنا پڑا کیونکہ خراب موسم کے سبب بگدورگا ایر پورٹ غیر کارکرد ہوچکا تھا ۔بحیثیت نائب صدر نائیڈو، ملک کی 58 یونیورسٹیوں اور اعلیٰ تعلیمی اداروں کا بھی دورہ کرچکے ہیں اور انہوںنے29 کانوکیشنوں میں کلیدی خطبہ بھی دیا ہے ۔ نائب صدرجمہوریہ کی حیثیت سے نائیڈو ، پہلی بار بیرونی ممالک کے دورے پر گوٹے مالا، پانامہ اور پیرو پہونچے، پہلی بار وہ اعلیٰ سطح دورے پر گوٹے مالا اور پانامہ پہنچے جہاں انہوںنے ان ممالک کے سنیٹ کے صدور سے دو طرفہ اور مختلف مسائل پر با ت چیت کی ۔ ہندوستان میں انہوںنے جن 22 ممالک کے قائدین کے ساتھ دو طرفہ اور مختلف مسائل پر تبادلہ خیال کیا ان میں جرمنی، سوئیزر لینڈ، بلجیم، اردن، ایران، امریکہ کے صدور، شاہ بھوٹان، پرنس آغا خاں، افغانستان، زمباوئے اور یوگینڈا کے نائب صدور، وزیر اعظم نیپال، نائب وزیر اعظم سیربیا، اور وزرائے خارجہ ازبکستان اور مالٹا بھی شامل ہیں۔

جواب چھوڑیں