بی سی طبقات کے افراد کو 2ہزار کروڑ کی مالی امدادکا فیصلہ

ریاستی حکومت نے غریبوں اور انتہائی پسماندہ طبقات کے افراد کو قرض فراہم کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس کا آغاز 15؍ اگست سے ہوگا ۔ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ کی ہدایت کے مطابق متعلقہ عہدیدار، ریاست کے 31اضلاع میں یوم آزادی سے بی سی طبقات کے غریبوں میں2ہزار کروڑ روپے کی مالی امداد کی فراہمی کیلئے انتظامات کررہے ہیں۔ پسماندہ طبقات کے غریب افراد کو مالی امداد فراہم کرنے کا فیصلہ آج ریاستی وزیر فینانس ایٹالہ راجندر کی قیامگاہ پر منعقد ہ ایک اجلاس میں کیا گیا جس میں وزیر بہبود پسماندہ طبقات جو گو رامنا اور دیگر عہدیدار شریک تھے ۔ ان وزرا نے عہدیداروں کو ہدایت دی کہ بی سی طبقات کے غریبوں میں صدفیصد سبسیڈی پر قرض فراہمی کے انتظامات کریں ۔ چیف منسٹر کے سی آر کی ہدایت پر دونوں وزرا نے ریاست کے پسماندہ طبقات کے غریبوں میں تقسیم کئے جانے والے سبسیڈی چیزوں پر غور وخوض کیا ۔ حکومت نے بی سی طبقات کے غریبوں کو بینک لینکیج کے بغیر راست قرض فراہم کرنے کا انقلابی فیصلہ کیا ہے ۔ ایٹالہ راجندر نے استفادہ کنند گان سے اپیل کی کہ وہ مالی امداد یا قرض کے حصول کیلئے درمیانی افراد کی خدمات حاصل نہ کریں۔ درمیانی افراد، آپ لوگوں کو دھوکہ دیتے ہیں۔ انہوںنے کہا کہ استفادہ کنند گان کے انتخاب میں شفافیت کو ملحوظ رکھا جائے گا اس سلسلہ میں درمیانی افراد کے رول کی کوئی گنجائش نہیں رہے گی ۔ چیف منسٹر کے سی آر، پسماندہ طبقات کے غریبوں کی حالت سے بخوبی واقف ہیں اس لئے وہ، قرض فراہمی کیلئے منفرد اسکیم کو روبہ عمل لارہے ہیں۔ اجلاس میں سابق وزیر ساریا، پرنسپل سکریٹری بی وینکٹیشم اور دیگر موجود تھے ۔

جواب چھوڑیں