ٹی آرایس اورحلیف جماعت کامقابلہ کرنے عظیم اتحادتشکیل

صدرپردیش کانگریس این اتم کمار ریڈی ‘ قائد اپوزیشن تلنگانہ کونسل محمدعلی شبیر‘ پارٹی سکریٹریز این بوس راجواورسلیم احمد انچارج کانگریس امور نے آج شام علی بن ابراہیم عبداللہ مسقطی نائب صدر تلنگانہ تلگودیشم پارٹی سے ان کے مکان واقع علیجاہ کوٹلہ پہنچ کر ملاقات کی ۔ دونوں جماعتوں کے قائدین نے تقریباً ایک گھنٹہ تک ریاست کی تازہ سیاسی صورتحال بالخصوص پراناشہر کے سیاسی حالات پر تبادلہ خیال کیا۔ اس موقع پرایڈیٹر سیاست جناب زاہدعلی خان اور نیوزایڈیٹر عامر علی خان ‘عرفان مسقطی ‘منان مسقطی ‘ خالد مسقطی اور عادل مسقطی بھی موجودتھے۔ بعدازاں میڈیا سے بات کرتے ہوئے اتم کمار ریڈی نے کہاہے کہ کانگریس نے تلگودیشم ودیگر ہم خیال جماعتوں کے ساتھ عظیم اتحاد کوقطعیت دیا ہے ۔ عظیم اتحاد نے ٹی آرایس ‘بی جے پی اورایم آئی ایم کا مشترکہ مقابلہ کرنے کا فیصلہ کیاہے ۔نائب صدرتلگودیشم علی مسقطی سے آج کی ہماری ملاقات اسی سلسلہ کی ایک کڑی ہے ۔ ہم نے اس اتحاد کو مستحکم بنانے اور حکمراں جماعت ٹی آرایس اور اس کی حلیف بی جے پی اور ایم آئی ایم کو شکست دینے کی حکمت عملی پر غورخوص کیاہے ۔ توقع ہے کہ عوام اس عظیم اتحاد کی تائید کرتے ہوئے ٹی آرایس اوراس کی حلیف جماعتوں کو شکست سے دوچار کریںگے۔ قائد اپوزیشن محمدعلی شبیر نے کہاہے کہ علی مسقطی تلگودیشم پارٹی کے نائب صدر اورایک اہم سیاسی قائد ہیں ۔انتخابی حکمت عملی پر آج ہماری ان سے تفصیلی بات چیت ہوئی ہے ۔ کانگریس ‘تلگودیشم اور دیگر ہم خیال جماعتیں‘ متحدہ طورپر ٹی آرایس اور اس کی حلیف جماعتیں بی جے پی اور ایم آئی ایم کا مقابلہ کریںگے۔ مرکز کی بی جے پی اور ریاست کی ٹی آرایس حکومت سے عوام بدظن ہوچکے ہیں۔ ساڑے چار سال کی حکمرانی کے دوران کے سی آر نے عوام کوصرف دھوکہ دیاہے ۔ پراناشہرکی ترقی کے لئے ایک بھی کام انجام نہیں دیا۔ کانگریس حکومت نے 14 ہزار کروڑ کی لاگت سے نئے شہر اور پرانے شہر میں فلک نماتک میٹروریل پراجکٹ کاآغاز کیاتھا۔ کے سی آر اورایم آئی ایم قائدین نے پرانا شہر میں میٹروریل پراجکٹ کی مخالفت کی جس کی وجہ سے یہ پراجکٹ تعطل کاشکار ہوگیا ۔ ایل اینڈٹی کمپنی نے پرانا شہر میں پراجکٹ کے تعمیری کام کوروک دیا۔ محمدعلی شبیر نے بتایا کہ کانگریس دور حکومت میں مسلمانوں کو 4فیصد تحفظات کوروبہ عمل لایاگیا جس سے ہزاروں اقلیتی طلباء نے اعلی تعلیم حاصل کرتے ہوئے سرکاری محکموں میں ملازمتیں حاصل کی ہیں۔ کے سی آر کے دورحکومت میں فیس ریمبرسمنٹ کی عدم اجرائی سے 45 اقلیتی انجینئرنگ کالجس بند کردیئے گئے ۔ علی بن ابراہیم مسقطی نے کہاکہ عظیم اتحاد کے مسئلہ پر کانگریس قائدین سے ان کی بات چیت کامیاب رہی۔ ہم نے متحدہوکر ٹی آرایس اور اس کی حلیف جماعتوں کے خلاف مقابلہ کرنے کا فیصلہ کیاہے اوروہ اس بات کی توقع کرتے ہیں کہ آئندہ انتخابات میں کانگریس کی زیرقیادت عظیم اتحاد کوشاندار کامیابی حاصل ہوگی اور تلنگانہ میں تلگودیشم کی تائید سے کانگریس برسراقتدآئے گی ۔ ٹی آرایس حکومت کو تنقید کانشانہ بناتے ہوئے علی مسقطی نے کہاکہ ٹی آرایس نے عوام کوہتھیلی میں جنت دکھاکر ساڑے چارسال تک گمراہ کیا ہے ۔پرانے شہر کی ترقی کے لئے کوئی کام نہیں کیا۔مسلمانوں کو12فیصد تحفظات کے نام پر دھوکہ دیاگیا۔ آئندہ انتخابات میں عوام انہیں سبق سکھائیںگے ۔

جواب چھوڑیں