موتیا بند آپریشن کے بعد18 افراد بینائی سے محروم

حکومت تلنگانہ کے اختراعی پروگرام ’’ کنٹی ویلگو‘‘ کے تحت ضلع ورنگل میں ہنمکنڈہ کے ایک خانگی ہاسپٹل میں کم از کم 18 افراد کو جن میں معمرین کی تعداد زیادہے ، موتیا بند کے آپریشن کے بعد بینائی سے محروم ہونے کا احساس ہوا ۔ بتایا جاتا ہے کہ شدید انفکشن کے سبب ان افراد نے بینائی سے محروم ہونے کی شکایت کی ۔ حقیقت میں یہ واقعہ 22ستمبر کو پیش آیا جب کہ بڑے پیمانے پر آئی چیک کیمپ کے بعد ان افراد کو موتیا بند آپریشن کیلئے ایک خانگی ہاسپٹل سے رجوع کیا گیا جہاں ان کا آپریشن کیا گیا مگر بینائی سے محرومی کا واقعہ جمعہ کو اس وقت منظر عام پر آیا جبکہ ہ مریض انفکشن کی شکایت پر ہاسپٹل سے رجوع ہوئے تھے ۔ 18 افراد میں سے جن کی سرجری کی گئی تھی ،7 مریضوں کو شدید نوعیت کا انفکشن ہوگیا‘ اور ان میں سے چند مریضوں کی ہاسپٹل کے ڈاکٹروں نے دوبارہ سرجری کی جس کے بعد انہوںنے کچھ بہتری محسوس کی ہے ۔ ڈسٹرکٹ میڈیکل اینڈ ہیلت آفیسر ورنگل ڈاکٹر ہریش راج نے مریضوں اور ان کے رشتہ داروں کو اس بات کا تیقن دیا کہ یہ انفکشن قابل علاج ہے اور بہتر علاج ونگہداشت کیلئے ان مریضوں کو حیدرآباد کے ایل وی پرساد آئی انسٹیٹیوٹ منتقل کردیا گیا ہے ۔ اس واقعہ کی تحقیقات کا حکم دینے کے بعد محکمہ صحت وطبابت کے اعلیٰ عہدیداروں نے خانگی ہاسپٹل کے اُس آپریشن تھیٹر کو مہر بند کردیا جہاں ان مریضوں کی آئی سرجری کی گئی تھی۔ اس واقعہ کی تصدیق کرتے ہوئے نگرانکار وزیر صحت ڈاکٹر سی لکشما ریڈی نے کہا کہ سرجری کے بعد18 افراد انفکشن کا شکار ہوگئے جنہیں ایل وی پرساد آئی انسٹیٹیوٹ روانہ کردیا گیا ہے جہاں ان کا بہتر علاج کیا جائے گا۔

جواب چھوڑیں