چارریاستوں کیساتھ اسمبلی انتخابات کے انعقاد کی اطلاع غلط۔:رجت کمار کی وضاحت

تلنگانہ کے چیف الیکٹورل آفیسر ( سی ای او) ڈاکٹر رجت کمار نے ہفتہ کو میڈیا کے ان رپورٹس کو مسترد کردیا جس میں بتایا گیا تھا کہ الیکشن کمیشن نے تلنگانہ اسمبلی کے انتخابات، ملک کی دیگر چار ریاستوں کے ساتھ کرانے کا فیصلہ کیا ہے ۔ ڈاکٹر رجت کمار نے آج وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ چند اخبارات میں ایسی اطلاعات شائع ہوئی ہیں کہ کمیشن نے تلنگانہ اسمبلی انتخابات، دیگر چار ریاستوں کے ساتھ کرانے کا فیصلہ کیا ہے ۔ اخبارات میں شائع یہ اطلاعات قیاس آرائیوں پر مبنی ہیں ۔ ان کا حقائق سے کوئی واسطہ نہیں ہے ۔ انہوںنے کہا کہ الیکشن کمیشن نے تلنگانہ اسمبلی انتخابات سے متعلق بھی کوئی فیصلہ نہیں کیا ہے۔ انہوں نے میڈیا سے خواہش کی کہ انتخابات سے مربوط کسی بھی خبر کی اشاعت سے قبل اسکی صداقت کو جانچ لیں اور متعلقہ عہدیداروں کی جانب سے جاری کردہ اطلاعات کو اہمیت دیں۔انہوں نے میڈیا کے نمائندوں کوبتایا کہ الیکشن کمیشن نے تلنگانہ قانون ساز کونسل کے گریجویٹس حلقہ میدک نظام آباد ‘ عادل آباد ‘ کریم نگر کی فہرست رائے دہندگان کی تیاری کے اقدامات کی ہدایت دی ہے ۔ اس حلقہ سے موجودہ ایم ایل سی کے سوامی گوڑ کی میعاد 29 مارچ 2019 کوختم ہونے والی ہے ۔ ڈاکٹر رجت کمار نے مزید بتایا کہ کونسل کے اس حلقہ گریجویٹس کی ووٹرلسٹ میں ناموں کے اندراج کے عمل کا آغاز یکم اکتوبر سے ہوگا۔ پہلی اور دوسری نوٹس بالترتیب 15 اور 25 اکتوبر کوشائع کی جائے گی۔ 6نومبرتک درخواستیں وصول کی جائیں گی۔ 20دسمبر کو مسودہ فہرست شائع کی جائے گی اور یکم جنوری کو ووٹرلسٹ کی اشاعت عمل میںلائی جائے گی۔ چیف الیکٹورل آفیسر نے مزید بتایا کہ الیکشن کمیشن آف انڈیا نے تلنگانہ قانون ساز کونسل کے ایک گریجویٹس حلقہ کے ساتھ ٹیچرس زمرہ کی 2نشستوں کے لئے انتخابات کی تیاریاں شروع کرنے کی ہدایت دی ہے ۔ ٹیچرس زمرہ کے دو حلقوں کے موجودہ ایم ایل سیز کی میعاد 29 مارچ کو ختم ہوگی۔ انہوں نے بتایا کہ ورنگل‘ کھمم اورنلگنڈہ کے علاوہ میدک ‘ نظام آباد ‘عادل آباد ‘کریم نگر پرمشتمل ٹیچرس کے 2حلقہ جات میں ووٹرلسٹ پرنظرثانی کی جائے گی۔ ٹیچرس زمرہ کے دونوں حلقوں میںیکم تا31جنوری اعتراضات وادعاجات قبول کئے جائیں گے اور 15فروری تک ان ادعاجات واعتراضات کی یکسوئی کی جائے گی۔ قطعی مسودہ فہرست 20فروری کو شائع کی جائے گی۔

جواب چھوڑیں