بینکوں میں بڑی معاملتوں پر نظر رکھی جائے گی : رجت کمار

الیکشن کمیشن، محکمہ انکم ٹیکس کی مدد سے ریاست تلنگانہ میں جہاں اسمبلی انتخابات منعقد ہونے والے ہیں، بینکوں میں کی جانے والی بڑی معاملتوں پر نظر رکھے گا ۔ دولت کے غیر قانونی بہاؤ کو ختم کرنے کے حصہ کے طور پر بڑی معاملتوں پر سخت نگرانی رکھی جائے گی ۔ چیف الیکٹورل آفیسر تلنگانہ ڈاکٹر رجت کمار نے اتوار کو یہ بات کہی ۔ انہوں نے کہا کہ ریاست میں جب تک ضابطہ اخلاق نافذ رہے گا تب تک یہ عمل جاری رہے گا ۔ حکومت کی سفارش پر گورنر تلنگانہ نے6 ستمبر کو اسمبلی تحلیل کردیا تھا ۔ اگر ضابطہ کی خلاف ورزی کرتے ہوئے بینکوں میں بڑی معاملتیں کی جاتی ہیں یا ضرورت پڑنے پر بینکوں سے اس بارے میں تفصیلات طلب کی جائیں گی ۔ انہوںنے کہا کہ الیکشن کمیشن نے مختلف سیاسی جماعتوں کے122 امیدواروں کو نوٹسیں جاری کی ہیں جنہوں نے گذشتہ انتخابات کے مصارف کی تفصیلات ہنوز داخل نہیں کی ہیں۔ عہدیدار نے بتایا کہ رائے دہندوں کو وی وی پی اے ٹی اور ووٹنگ مشینوں کے بارے میں شعور یا حساس بنانے کیلئے ایک یا دو دن کے اندر ریاست کے تمام حلقہ جات میں ایک ہزار سے زائد گشتی یونٹس تعینات کئے جائیں گے۔ ڈاکٹر رجت کمار نے مزید بتایا کہ اسمبلی انتخابات کے انعقاد کے خرچ کیلئے ریاستی حکومت سے محکمہ الیکشن کو 275 کروڑ روپے وصول ہوئے ہیں۔ اگر ضرورت پڑے تو ہم مزید رقم فراہم کرنے کی ہدایت دیں گے ۔ انہوںنے مزید کہا کہ صرف ریاستی انتظامیہ ہی انتخابی مصارف برداشت نہیں کرے گا ۔ بلکہ الیکشن کمیشن بھی، الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں کی خریداری ، اسکی دیکھ بھال اور مرمت کے ساتھ مرکزی فورس کے بشمول عملہ کی تعیناتی کے اخراجات برداشت کرے گا ۔ انتخابی تیاریوں کے بارے میں انہوںنے کہا کہ ریاست کو درکار تمام الیکٹرانک ووٹنگ مشینیں اور وی وی پی اے ٹی مشینیں ، وصول ہوچکی ہیں ان میں سے70 فیصد مشینوں کی چیکنگ کا عمل مکمل ہوچکا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جہاں تک مجھے علم ہے ایک یا دو دنوں میں ووٹنگ اور وی وی پی اے ٹی مشینوں کے استعمال سے عوام کو واقف کرایا جائے گا انہوں نے کہا کہ ریاست کے ہر ایک وارڈ، پنچایت اور ضرورت پڑنے پر ہر بوتھ تک موبائیل ویانس کو روانہ کرتے ہوئے عوام کو ووٹنگ اور وی وی پی اے ٹی مشینوں کے استعمال سے باشعور بنایا جائے گا ۔ عوام کو ان مشینوں کے استعمال سے متعلق تمثیلی مشق کرائی جائے گی اس کام کیلئے ہم نے ہر ایک اسمبلی حلقہ میں10سے زائد گشتی ویانوں کو رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔واضح رہے کہ الیکشن کمیشن کی ایک ٹیم نے حال ہی میں ریاست کا دورہ کرتے ہوئے یہاں جاری انتخابی تیاریوں کا جائزہ لیا تھا ۔

جواب چھوڑیں