اقوام متحدہ میں انتشار پیدا کرنے کیخلاف انجیلامرکل کا ٹرمپ کو انتباہ

جرمن چانسلر انجیلا مرکل نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو خبردار کیا ہے کہ وہ اقوام متحدہ کو “تباہ” نہ کریں۔کل باویریا میں علاقائی انتخابی مہم کے دوران میرکل کا کہنا تھا کہ “میں سمجھتی ہوں کہ کوئی نئی چیز بنائے بغیر موجود چیز کو تباہ کرنا ایک انتہائی خطرناک بات ہے۔سابق امریکی صدر بارک اوباما کی قریبی حلیف مرکل اس خیال کا اظہار کیا کہ دنیا کے بہت سے بحرانات کا حل تکثیریت میں ہے۔جرمن چانسلر نے کہا کہ ٹرمپ مسائل کے حل میں ایسے ویژن سے قاصر رہتے ہیں جو سب کو راضی کر دے ،،، لہذا وہ ہر بین الاقوامی بات چیت میں خود کو اکیلے کامیابی کے روپ میں دیکھتے ہیں۔گزشتہ ہفتے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے سامنے خطاب میں ٹرمپ نے باور کرایا تھا کہ وہ عالمگیریت کے نظریہ کو مسترد کرتے ہیں اور وطن پرستی کے موقف کو اپناتے ہیں۔امریکی صدر نے ’’عالمی حکمرانی‘‘ کو نکتہ چینی کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ یہ استبداد کا شکار ہے۔ ٹرمپ نے ذمّے دار اقوام سے مطالبہ کیا کہ وہ اس کے خلاف برسرِ جنگ ہوں انجیلا مرکل ٹرمپ کا سامنا کرنے والے کیمپ میں اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل آنتونیو گوتیریسکے ساتھ کھڑی ہیں۔ گوتیریس نے ٹرمپ کے خطاب سے قبل خبردار کیا تھا کہ عالمی نظام آج انارکی میں اضافہ کر رہا ہے۔

جواب چھوڑیں