سرکاری اسکیمات کے تشہیری ہورڈنگس پر چیف منسٹر‘وزراء کی تصاویر موجود: اتم کمارریڈی

تلنگانہ کانگریس کمیٹی نے ٹی آرایس حکومت کی جانب سے مسلسل انتخابی ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی پر اپنے شدید ردعمل کا اظہارکیا اور چیف الیکٹورل آفیسر رجت کمار کی جانب سے کوئی کاروائی نہ کرنے پر تشویش کا اظہارکیا اور شبہ ظاہرکیاکہ رجت کمار کی نگرانی میں ریاست میں غیرجانبدار‘ آزادانہ اور شفاف انتخابات منعقد نہیں ہوسکتے۔ چنانچہ کانگریس پارٹی کے ایک ہنگامی اجلاس میں جو آج گاندھی بھون میں منعقد ہوا، ٹی آرایس حکومت اورچیف الیکٹورل آفیسر کے خلاف الیکشن کمیشن آف انڈیا سے نمائندگی کرتے ہوئے تلنگانہ میں آزادانہ اور منصفانہ انتخابات منعقد کرنے کا مطالبہ کیاجائے گا۔ صدر ٹی ایس پی سی سی این اتم کمارریڈی نے اجلاس کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آج کے اجلاس میں ریاست میں انتخابی سرگرمیوں کا جائزہ لیاگیا اور پارٹی کی حکمت عملی پرغوروخوص کیاگیا اور یہ محسوس کیاگیا کہ اسمبلی کی تحلیل کے بعد انتخابی ضابطہ اخلاق کے سختی کے ساتھ نفاذ میں ریاستی الیکشن کمیشن ناکام ہوچکا ہے۔ تلنگانہ کے تمام آرٹی سی بسوں اور شاہراہوں پر جگہ جگہ حکومت کی فلاحی اسکیمات کے تشہیری ہورڈنگس اور پوسٹرس لگائے گئے ہیں جن پر نگرانکار چیف منسٹر، ریاستی وزراء اور ٹی آرایس قائدین کے تصاویر طبع ہیں۔ ان تشہیری مواد کو آج تک نہیں ہٹایاگیا۔ الیکشن کمیشن کی ذمہ داری ہے کہ وہ غیرجانبداری کا مظاہرہ کرتے ہوئے حکمراں جماعت کے قائدین کی تصاویر کو آرٹی سی بسوں اور سڑکوں پر واقع ہورڈنگس سے ہٹایاجائے۔الیکشن کمیشن کی جانب سے اے وی ایم مشینوں کی جانچ سے متعلق اتم کمارریڈی نے تمام اسمبلی حلقوں میںپولنگ بوتھس پر مشینوں کی جانچ کے انتظامات کرنے کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے خدشہ ظاہرکیا کہ حکمراں جماعت کی جانب سے ووٹنگ مشینوں میں چھیڑچھاڑ کی جاسکتی ہے۔ چنانچہ تمام سیاسی جماعتوں کے نمائندوں کو مشینوں کی جانچ کا موقع فراہم کیاجائے۔ ریاست کے بعض ٹی وی چینلس اور اخبارات کی جانب سے نگرانکار حکومت اور حکمراں جماعت ٹی آرایس کی تائید میں بڑے پیمانہ پر تشہیرکی جارہی ہے اور اپوزیشن کانگریس کے خلاف جھوٹا پروپگنڈہ کیاجارہا ہے۔ ایسا محسوس ہوتا ہے کہ یہ ٹی وی چیانلس اور اخبارات پیڈ نیوز کے تحت حکمراں جماعت کی تشہیر کررہے ہیں۔ چنانچہ کانگریس پارٹی کی جانب سے بہت جلد الیکشن کمیشن آف انڈیا سے نمائندگی کرتے ہوئے جانبدارانہ خبریں شائع کرنے والے چینلس اور اخبارات کو پابند کرنے اور تلنگانہ میں آزادانہ اور منصفانہ انتخابات کو یقینی بنانے کا مطالبہ کیاجائے گا۔ اتم کمارریڈی نے ہمخیال جماعتوں تلگودیشم، پی آئی ، ٹی جے ایس کے ساتھ انتخابی مفاہمت پر کے ٹی آر کی جانب سے ان جماعتوں کو تلنگانہ کی دشمن قراردینے پر شدید برہمی کا اظہارکرتے ہوئے الزام عائد کیا’’ کے سی آر تلنگانہ کے دشمن نمبر ون‘‘ ہیں۔ کے سی آر اور ان کا خاندان نے تلنگانہ کی دولت کو لوٹ کر کروڑپتی بن گیا۔ ’’انہوں نے کے سی آر کو عوام کو دھوکہ دینے میں نمبر ون‘‘ قراردیا۔ اتم کمارریڈی نے کہا کہ انتخابی مہم میں’’کے سی آر ہٹاؤ۔تلنگانہ بچاؤ‘‘ کانگریس کا نعرہ ‘‘ رہے گا۔ انچارج کانگریس امور آرسی کنتیا نے کہا کہ ہمیں شبہ ہے کہ ٹی آرایس کی انتخابی مہم میں ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی اور سرکاری مشنری کا بیجا استعمال ہوگا۔ کانگریس کی جانب سے بہت جلد الیکشن کمیشن آف انڈیا سے انتخابی ضابطہ اخلاق کو سختی کے ساتھ نافذ کرنے کا مطالبہ کیاگیا۔ قائداپوزیشن محمد علی شبیر ‘ ریونت ریڈی، کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی، اے آئی سی سی سکریٹری سلیم احمد، نائب صدرعابدرسول خاں چیرمین مائناریٹی ڈیولپمنٹ خواجہ فخرالدین، جنرل سکریٹریز ایس کے افضل الدین، محمدمقصود احمد، سکریٹری سید یوسف ہاشمی، سید عظمت اللہ حسینی کے علاوہ اراکین اسمبلی وسینئر قائدین نے اس اجلاس میں شرکت کی۔

جواب چھوڑیں