وزیر اعظم نے کرپشن کی دیمک کو ختم کردیا : نقوی

مرکزی وزیر مختار عباس نقوی نے آج کہا کہ وزیر اعظم نے کرپشن کی دیمک اور سابق حکومت کی جانب سے چھوڑے گئے ناکامی کے دعووں سے درپیش چیلنج پر قابو پایا ہے ، تاکہ سماج میں تمام طبقات کی ترقی کو یقینی بناسکیں۔ نقوی نے راجستھان کے ضلع الور میں غریبوں ، پسماندہ طبقات اور اقلیتوں کے عالمی معیار کے اوّلین تعلیمی ادارے کا سنگ ِ بنیاد رکھنے کے بعد یہ بات کہی ۔ انہوں نے کہا کہ یہ ادارہ 2020ء میں کارکرد ہوجائے گا۔ نقوی نے کہا کہ وزیر اعظم نے سیاسی عدم رواداری کا شکار بننے کے باوجود شمولیاتی ترقی کے لیے کام کیا ہے ۔ یو این آئی کے بموجب انہوں نے کہا کہ حکومت ترقیاتی کام سیاسی مقصدسے ووٹ حاصل کرنے کے لئے نہیں کر رہی ہے بلکہ غریبوں کی زندگی میں خوشحالی آئے اس کے لئے کام کیا جا رہا ہے۔ ملک میں کچھ لوگ منفی ماحول بنانا چاہتے ہیں تاکہ ترقی کو لے کر بنے مثبت ماحول کو منفی بنایا جاسکے۔ گزشتہ 70 برسوں میں ملک میں کیا ہوا اس کی جانکاری سب کو ہے۔ لوگوں کو یہ طے کرنا ہے کہ ترقی کے لئے وقف حکومت کو اقتدار میں بنائے رکھنا چاہئے۔ نقوی نے یہاں ایک’ سدبھاؤنا منڈپ ‘، گورنمنٹ کالج، بجلی کا ذیلی مرکز ، سبزی منڈی اور کچھ دیگر ترقیاتی اسکیموں کا سنگ بنیاد رکھا۔ا ن?وں نے کہا کہ یہاں جو عالمی معیار کا تعلیمی ادارے بنے گا اس میں 40 فیصد سیٹ خواتین کے لیے مختص ہو گی۔ اس ادارے کے قیام کے لئے حکومت نے ایک اعلی سطحی کمیٹی قائم کی تھی جس نے میوات علاقے میں اس ادارے کے قیام کی سفارش کی تھی۔ اس انسٹی ٹیوٹ میں پرائمری سے لے کر اعلی سطح تک تعلیم دی جائے گی۔ اس کے ساتھ ہی یہاں ’کوشل وکاس‘سینٹر بھی قائم کیا جائے گا۔ نقوی نے کہا کہ میوات تعلیمی لحاظ سے بہت ہی پچھڑا ہوا ہے لیکن اس ادارے کے قیام سے اس علاقے کی جامع ترقی ہو سکے گی۔

جواب چھوڑیں