ہندوستان اورویسٹ انڈیز کے درمیان آج سے پہلا ٹسٹ

 

 سمندرپار ہونے والی ناکامی سے خوفزدہ ہندوستان پھرایک بار وطن کی سہولت کا طلبگار رہے گا جبکہ ناتجربہ کار ویسٹ انڈیز کے ساتھ جمعرات سے دو ٹسٹ میاچس کی سیریز کا آغاز ہوگا۔ اس کایہ مقصد ہوگاکہ ٹیم کا امتزاج مناسب رہے جس کے بعد آسٹریلیاکے طویل دورہ پر روانہ ہوناہے۔ ہندوستان کوجنوبی افریقہ اورانگلینڈ میں گذشتہ 9ماہ کے دوران سیریز میں شکستوں کا سامنا کرنا پڑا ، لیکن اب بھی وہ طویل فارمیٹ کی نمبرایک ٹیم کا موقف برقراررکھنے میںکامیاب رہے۔ اس مرحلہ پرویسٹ انڈیزکو جامع شکست دینے سے ویراٹ کوہلی کی زیرقیادت ٹیم کاحوصلہ بلند ہوسکتاہے جس کوآسٹریلیاکے دورہ میںایک اور سخت آزمائش کامرحلہ درپیش ہے۔ جس کا نومبرکے اواخر سے آغاز ہونے والا ہے۔ آٹھویں رینک کی ویسٹ انڈیز کے خلاف اسے فائدہ ہونے کاامکان نہیں ہے جواپنے طورپر اپنے مشکل ترین دورہ میں اپنا اثر ڈالنا چاہے گی جس نے اسے2002کے بعد سے شکست نہیں دی۔ ہندوستانی ٹیم پر یہ نکتہ چینی ہورہی ہے کہ اس نے انگلینڈ میں کئی تبدیلیاں کی تھیں جبکہ اس کے اوپنرمرلی وجئے اورشکھردھون نے ٹیم میںاپنامقام گنوادیا تھا۔ یہاںتک کہ کرون نائر جنہوںنے انگلینڈ میں بنچ پر بٹھانے کے خلاف انتباہ دیاتھا۔ انہیں ویسٹ انڈیز دورہ کے لئے نظرانداز کردیاگیا۔ جس پر سلیکشن کے تعلق سے شدید بحث چھڑ گئی ۔ بہرحال کے ایل راہول کونئے کھلاڑی پرتھوی شاہ کے ساتھ دو ایک میاچس میں شروعات کرائی جائے گی۔ اگر یہ امتزج کام بھی کرجائے تویہ کہنا مشکل ہے کہ یہ جوڑی آسٹریلیاکے دورہ میں بھی وہاں کے بیاٹنگ کے حالات میں کوئی خاص فرق پیداکرپائے گی۔بولنگ میں ہندوستان3اسپنرس کوشامل کرسکتاہے جوآر اشون ، جڈیجہ اورکلدیپ یادو ہوںگے جبکہ اومیش یادو، محمد سمیع کے ساتھ پیس اٹیاک میںجوڑی دار رہیںگے۔ یہ لوگ آرام دیئے گئے جسپریت بمراہ،بھونیشورکماراورزخمی ایشانت شرما کی غیرحاضری میں شامل کئے جائیںگے۔ جڈیجہ ، ہاردیک پانڈیا کے متبادل ہوںگے جنہوںنے ایشیاکپ میں کامیاب واپسی کی ہے۔ ہنوماوہاری کوبھی ٹیم میں شامل رکھاجائے گا۔ بہرحال یہ مکمل طاقتور ہندوستانی ٹیم نہیں ہے لیکن پھربھی وہ ناتجربہ کارویسٹ انڈیز پر غلبہ پانے کی اہل ہے۔ ویسٹ انڈیز ٹیم میںبھی کافی صلاحیتیں ہیں لیکن تجربہ کا فقدان ہے جس سے وہ ہندوستان میں مقابلہ کرسکے۔ میاچ ہندوستانی معیاری وقت کے مطابق صبح9:30 بجے سے شروع ہوگا۔

جواب چھوڑیں